مسلمانوں کو دہشت گرد دکھانے پر فاطمہ بھٹو کو ہالی ووڈ سے معذرت کا انتظار -
The news is by your side.

Advertisement

مسلمانوں کو دہشت گرد دکھانے پر فاطمہ بھٹو کو ہالی ووڈ سے معذرت کا انتظار

امریکی ٹی وی سیریز میں بھارتیوں کو دہشت گرد دکھانے پر امریکی اسٹوڈیوز کی معذرت کے بعد معروف مصنفہ فاطمہ بھٹو نے کہا ہے کہ اب انہیں ان فلموں اور ڈراموں کی جانب سے معذرت کا انتظار ہے جن میں مسلمانوں کو دہشت گرد دکھایا گیا ہے۔

خیال رہے کہ چند روز قبل بالی ووڈ اداکارہ پریانکا چوپڑا کی امریکی ڈرامہ سیریز ’کوانٹیکو‘ کی ایک قسط میں دکھایا گیا تھا کہ 3 بھارتی دہشت گرد نیویارک کے علاقے مین ہٹن میں بم دھماکہ کرنے اور اس کا الزام پاکستان پر لگانے کا منصوبہ بناتے ہیں۔

تاہم پریانکا چوپڑا جو ڈرامے میں فیڈرل بیورو آف انویسٹی گیشن (ایف بی آئی) ایجنٹ کا کردارا دا کر رہی ہیں، اپنی ٹیم کے ساتھ اس منصوبے کو ناکام بنا دیتی ہیں۔

قسط کے نشر ہوتے ہی بھارت میں ہنگامہ کھڑا ہوگیا۔ بھارتیوں کو سچائی پسند نہ آئی اور وہ تنقید کے نشتر لے کر پریانکا چوپڑا پر چڑھ دوڑے۔

انہوں نے پریانکا کو غدار قرار دیتے ہوئے انہیں پاکستان جانے کا مشورہ دیا جبکہ ہندو انتہا پسند تنظیم شیو سینا نے ان کے خلاف ملک گیر احتجاج بھی شروع کردیا۔

مجبور ہو کر نہ صرف پریانکا چوپڑا کو اپنے جذباتی ہم وطنوں سے معافی مانگنی پڑی بلکہ اس کے ساتھ ڈرامہ پیش کرنے والے اے بی سی اسٹوڈیوز نے بھی بھارتیوں کو آئینہ دکھانے پر معذرت طلب کرلی۔

اے بی سی اسٹوڈیوز کے معافی مانگنے کے بعد سابق وزیر اعظم بے نظیر بھٹو کی بھتیجی اور مصنفہ فاطمہ بھٹو نے اپنے ٹویٹ میں کہا کہ اب انہیں ان فلموں اور ڈراموں کی جانب سے معذرت کا انتظار ہے جس میں مسلمانوں کو دہشت گرد دکھایا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ گزشتہ برس وہ ایک تقریب میں اس پر گفتگو بھی کر چکی ہیں کہ کس طرح ہالی ووڈ پروپیگنڈے کو فروغ دیتا ہے خصوصاً ہالی ووڈ فلموں میں مسلمانوں کو صرف دہشت گردوں کے طور پر دکھایا جاتا ہے۔

گزشتہ برس کی گئی اپنی گفتگو میں انہوں نے چند فلموں کے مناظر بھی دکھائے تھے جس میں مسلمانوں کو دہشت گرد دکھایا گیا ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں