The news is by your side.

Advertisement

بے نامی جائیدادیں: ایمنسٹی اسکیم سے فائدہ نہ اٹھانے والوں کو قید ہوگی، کمشنر ایف بی آر

اسلام آباد: فیڈرل بورڈ آف ریونیو کے چیف کمشنرلارج ٹیکس یونٹ محمدنصیربٹ نے کہا ہے کہ ایمنسٹی اسکیم سےفائدہ نہ اٹھانےوالےکو7سال تک قیدہوگی۔

اسلام آباد میں پریس کانفرنس کرتے ہوئے محمد نصیر بٹ کا کہنا تھا کہ ایمنسٹی اسکیم ختم ہونے کے بعد خفیہ طور پر رکھی جانے والی جائیدادیں بھی ضبط کرلی جائےگی اور واجب الاداٹیکس کی رقم کا100فیصدجرمانے کے ساتھ اضافی ٹیکس بھی ادا کرنا ہوگا۔

اُن کا کہنا تھا کہ ہمیں کئی شعبوں سےاچھارسپانس ملنےکی توقع ہے، 30جون تک سہولت سےفائدہ نہ اٹھایاگیاتوقانون حرکت میں آئے گا،ایمنسٹی اسکیم لینے والوں کو ایک کروڑکی جائیداد پر ڈیڑھ لاکھ روپےٹیکس دیناہوگا۔

مزید پڑھیں: ایمنسٹی اسکیم کا بنیادی مقصد تمام غیرقانونی اکاؤنٹس کو دستاویزی شکل دینا ہے، حماد اظہر

کمشنر ایف بی آر کا کہنا تھا کہ 10کروڑ روپےکےپلاٹ پر15لاکھ روپےٹیکس وصول کیاجائےگا، ایمنسٹی اسکیم کےتحت پراپرٹی پرڈیڑھ فیصدٹیکس لاگوہوگا۔

یاد رہے کہ حکومت نے خفیہ جائیدادیں رکھنے والوں کے لیے ایمنسٹی اسکیم متعارف کرائی جس کی معیاد 30 جون تک ہے، اس ضمن میں وزیراعظم پاکستان نے دو بار قوم کے نام خصوصی پیغام جاری کیا اور عوام کو قائل کرنے کی کوشش کی کہ وہ اپنی پراپرٹیز کو قانونی بنائیں اور ملک کی مدد کریں۔

چیئرمین ایف بی آر شبر زیدی کا کہنا تھا کہ یہ ایمنسٹی اسکیم نہیں بلکہ اثاثے ظاہر کرنے کا قانون ہے، بے نامی ایکٹ 2017 کو لوگ نظر انداز کررہے ہیں، 2018 میں جو ایمنسٹی اسکیم متعارف کرائی گئی اُس میں بے نامی ایکٹ کو نافذ نہیں کیا گیا تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں