The news is by your side.

Advertisement

ملک بھر میں گھی اور تیل کے بحران کا خدشہ ‏

گھی ملوں نے ملک بھر میں فیکٹریاں بند کرنے کی دھمکی دے دی ۔

پاکستان وناسپتی مینوفیکچر ایسوی ایشن نے وزیر خزانہ شوکت ترین کو خط کے ذریعے اپنے ‏تحفظات سے آگاہ کر دیا۔ ‏

سابق چئیرمین پی وی ایم اے شیخ امجد رشید کا کہنا ہے کہ اگر ہمارے مطالبات نہ مانے گئے تو ‏گھی ملیں بند کردیں گے حکومت کی جانب سے فاٹا اور پاٹا کو ٹٰیکس چھوٹ کے فیصلے کے بعد ‏ملیں چلانا ممکن نہیں رہے گا۔

سابق صدر پاکستان وناسپتی مینوفیکچر ایسویسی ایشن شیخ عمر ریحان کا کہنا ہے کہ موجودہ ‏بجٹ میں گھی اور تیل انڈسٹری کو ریلیف دینے کے بجائے تباہی کے دہانے پر کھڑا کردیا ہے ملک ‏بھر میں 122 سے زائد گھی ملیں ہیں بجٹ میں فاٹا پاٹا کے عوام کے نام پر بڑے سرمایہ داروں کی ‏گھی انڈسٹریز کو غیر ضروری مراعات دینا قابل قبول نہیں۔

شیخ عمر ریحان نے کہا کہ فیصلے سے حکومت کو خوردنی تیل کی درآمد میں تقریباً 160 ارب ‏روپے نقصان ہونے کا اندیشہ ہے فاٹا پاٹا گھی انڈسٹریز کو ٹیکس چھوٹ دینے سے مقامی صنعتوں ‏کی بندش اور لاکھوں مزدور بے روزگار ہونے کا خدشہ ہے اس فیصلے سے ہماری فیکٹریاں کھنڈر بن ‏جائیں گی اعلی عدلیہ سمیت تمام قانونی راستہ اخیتار کیا جائےگا اپنی فیکٹریاں بند کرکے چابیاں ‏حکومت کے حوالے کردیں گے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں