The news is by your side.

Advertisement

گرین لائن منصوبہ: کم قیمت بسیں فراہم کرنے والی کمپنی مشکل کا شکار

کراچی: گرین لائن منصوبے میں تاخیر کا خدشہ پیدا ہو گیا ہے، سب سے کم قیمت بسیں فراہم کرنے والی کمپنی کو قانونی پیچیدگیوں کا سامنا کرنا پڑ گیا ہے۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق گرین لائن منصوبے کے لیے کم قیمت بسیں فراہم کرنے والی کمپنی مشکل کا شکار ہو گئی ہے، جس کی وجہ سے یہ منصوبہ بر وقت پورا نہ ہونے کا خدشہ پیدا ہو گیا ہے۔

ذرایع کا کہنا ہے کہ گرین لائن کو بسیں فراہم کرنے کا ٹینڈر زونگ ٹانگ نامی کمپنی نے حاصل کیا تھا، تاہم اس کمپنی کو بی آر ٹی پشاور کو بسیں فراہم کرنے والی کمپنی گولڈن ڈریگن نے چیلنج کر رکھا ہے۔

گولڈن ڈیگن کا دعویٰ ہے کہ زونگ ٹانگ نے اوریجنل کی بجائے فوٹو کاپی گارنٹی جمع کروائی تھی، ذرایع کا کہنا ہے کہ اس سلسلے میں گولڈن ڈریگن نامی کمپنی کی جانب سے درخواست گریونسسز ری ڈریسل کمیٹی (شکایات کی ازالہ کمیٹی) نے مسترد کر دی ہے لیکن تحریری فیصلہ آنا ابھی باقی ہے، جس کے بعد ہی بسوں کا آرڈر جاری ہوگا۔

گرین لائن منصوبے میں تاخیر، کے ایم سی کو ذمہ دار قرار دے دیا گیا

ذرایع کے مطابق تحریری فیصلے کے 5 ماہ بعد بسیں آ سکیں گی، تاہم اگر گولڈن ڈریگن نے عدالت سے رجوع کر لیا تو یہ منصوبہ ایک بار پھر تاخیر کا شکار ہو سکتا ہے۔

واضح رہے کہ وفاقی حکومت کی جانب سے جون 2021 تک گرین لائن بحال کرنے کا اعلان کیا گیا تھا، جب کہ ‎12 جون 2020 کو بسیں خریدنے کی اجازت جاری کی گئی تھی، ‎گرین لائن کا پورا منصوبہ 24 ارب روپے کی لاگت سے تیار ہونا ہے۔

منصوبے کے تحت ‎پہلے مرحلے میں کراچی کے علاقے سرجانی سے نمائش تک 200 سے 250 افراد کی گنجائش والی 80 بسیں چلیں گی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں