The news is by your side.

Advertisement

وفاقی کابینہ نے تحریک لبیک پاکستان پر پابندی کی منظوری دے دی

اسلام آباد: وفاقی کابینہ نے تحریک لبیک پاکستان پر پابندی کی منظوری دے دی ہے، پنجاب حکومت نے تحریک لبیک پاکستان پر پابندی کی سفارش کی تھی۔

ذرائع کابینہ ڈویژن کے مطابق وفاقی کابینہ نے تحریک لبیک پاکستان پر پابندی کی منظوری دیدی ہے، وفاقی کابینہ نے انسداد دہشت گردی ایکٹ کے تحت پابندی کی منظوری دی، وفاقی کابینہ سے منظوری سرکولیشن سمری کے ذریعے لی گئی۔

کابینہ ڈویژن کے ذرائع کا کہنا ہے کہ سمری وزیرداخلہ کی جانب سے بھیجی گئی تھی، سمری کے مطابق پنجاب حکومت نے تحریک لبیک پاکستان پر پابندی کی سفارش کی تھی۔

گذشتہ روز اسلام آباد میں نیوز کانفرنس کرتے ہوئے وفاقی وزیر داخلہ شیخ رشید کا کہنا تھا کہ تحریک لبیک پاکستان پر انسداد دہشتگردی ایکٹ کےتحت پابندی کا فیصلہ کیا ہے، ٹی ایل پی پر پابندی کی سمری کابینہ کو بھجوارہےہیں، فیصلہ اینٹی ٹیررازم ایکٹ 1997(11)بی کےتحت کیا۔

وزیر داخلہ شیخ رشید نے ٹی ایل پی کے سوشل میڈیا چلانے والے لوگ کو مخاطب کرتے ہوئے کہا تھا کہ وہ سرینڈر کردیں، ان کی ایما پر تھانوں پر حملے ہوئے ، آپ نے ایمبولینسز کو روکا ہے , پولیس اہلکاروں کو اغوا کے بعد تشدد کانشانہ بنایا، پرتشدد واقعات میں دو پولیس اہلکار شہید جبکہ تین سو چالیس سے زائد زخمی ہوئے۔

وفاقی وزیر داخلہ نے پریس کانفرنس میں بتایا کہ پنجاب حکومت نے تنظیم پر پابندی کی سفارش کی ہے، ٹی ایل پی کے سیاسی حالات پر نہیں بلکہ کردار کی وجہ سے پابندی لگارہےہیں، ٹی ایل پی والوں کو کہتا ہوں کہ آپ حکومت کو مسائل سے دو چار نہیں کرسکتے۔

وزیر داخلہ نے واضح کیا تھا کہ ختم نبوت کے قانون میں کوئی ترمیم نہیں کی گئی ہے، ہم ایسا مسودہ چاہتے ہیں جس سے نبیﷺ کا جھنڈا بلند ہو، اب قرارداد وہی آئے گی جس سے دنیا میں پیغام عاشق رسولﷺ کا جائے گا۔

یہ بھی پڑھیں: حکومت کا تحریک لبیک پاکستان پر پابندی لگانے کا فیصلہ

گذشتہ روز اے آر وائی نیوز کے پروگرام دی رپورٹرز میں گفتگو کرتے ہوئے شیخ رشید نے بتایا کہ ٹی ایل پی ‏سےجومعاہدہ تھا وہ اعجازشاہ نےکیا تھا ہم مسودےکےمعاملےکولیکرآگےبڑھ رہےتھے، ٹی ایل پی ‏والوں سےمسودے پر دو دن بات چیت ہوتی رہی وہ ایسا مسودہ چاہتے تھےجو کسی صورت قبول ‏نہیں کیا جاسکتاتھا۔

شیخ رشید کا کہنا تھا کہ سڑکوں پر کیا ہو رہا تھا پوری دنی انےدیکھ لیا، صورتحال خرابی کی طرف ‏جارہےتھےپابندی لگانا ضروری تھا، عدالتوں میں فیصلے ہوتےہیں، ٹی ایل پی پرپابندی لگانےکافیصلہ ‏ضروری ہوگیاتھا اسپتالوں پرحملےکیےگئے ایمبولینسز روکی گئیں،مریضوں ‏کوآکسیجن نہیں مل رہی تھی۔

دوسری جانب اپنے ٹوئٹ میں وفاقی وزیر فوادچوہدری کا کہنا تھا کہ لبیک جیسے شدت پسند گروہ اسلام کی شناخت کو بدلنا اور تشدد، انتہاپسندی کو ہوا دینا چاہتے ہیں،ایسے گروہ کی کوششوں کوناکام بناناہرمسلمان کافرض ہے۔

اپنے پیغام میں فواد چوہدری کا کہنا تھا کہ برصغیر میں اسلام درگاہوں اور اولیائے کرام کی تبلیغ بزرگان دین کی محبت اور انسانیت کےدرس کی مضبوط بنیادوں پراستوار ہوا ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں