The news is by your side.

وزیر اعظم کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس

اسلام آباد: وزیر اعظم عمران خان کی زیر صدارت وفاقی کابینہ کا اجلاس ختم ہوگیا۔ اجلاس میں کابینہ کو سیکیورٹی صورتحال اور ایس پی طاہر داوڑ کے واقعے پر بریفنگ دی گئی۔

تفصیلات کے مطابق وزیر اعظم عمران خان کا طلب کردہ اجلاس آج وزیر اعظم کے دفتر میں ہوا۔ اجلاس میں وزرا نے اپنے متعلقہ محکموں کو دیے گیے اہداف کے متعلق رپورٹ دی جبکہ مختلف ٹاسک فورسز نے بھی اب تک کی کارکردگی کے متعلق بریفنگ دی۔

اجلاس میں وفاقی کابینہ نے 100 روزہ حکومتی پلان پر عملدر آمد کا تفصیلی جائزہ لیا۔ وزیر اعظم نے ہدایت کی کہ پلان پر عملدر آمد کو ہر صورت یقینی بنایا جائے۔

اجلاس میں کابینہ کو عالمی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کے ساتھ جاری مذاکرات اور وزیر اعظم کے 20 نومبر کو دورہ ملائیشیا پر اعتماد میں لیا گیا۔

کابینہ کو سیرت النبی ﷺ کانفرنس سمیت 12 ربیع الاول کی تیاریوں سے آگاہ کیا گیا۔ وفاقی کابینہ نے 12 ربیع الاول کو شان و شوکت سے منانے کا فیصلہ کیا۔

اجلاس میں آذر بائیجان سے سزا یافتہ قیدیوں کے تبادلے کے معاہدے کی توثیق کی گئی۔ طاہر امام بخش بنام حکومت پاکستان رٹ پٹیشن پر کابینہ سے رہنمائی لی گئی علاوہ ازیں وی آئی پی فلیٹس سے متعلق ایریل ورک لائسنس کی توسیع کی منظوری بھی دی گئی۔

کابینہ نے کار بنانے والی کمپنی کی پابندی کے حامل آئٹمز کو کابل سے کراچی منگوانے کی منظوری دی۔ وفاقی کابینہ نے نیشل ٹیلی کمیونیکیشن کے نظر ثانی بجٹ کی بھی منظوری دی  جبکہ نیشنل ہیلتھ سروسز اور روانڈا میں تعاون کے پروگرام کی بھی منظوری دے دی گئی۔

اجلاس میں پاک افغان نیشنل ڈیزاسٹر مینجمنٹ کے شعبےمیں تعاون کی یادداشت (ایم او یو) کا بھی جائزہ لیا گیا۔ کابینہ نے پی ٹی ڈی سی کے مینیجنگ ڈائریکٹر کے اضافی چارج کی منظوری دی۔

وفاقی کابینہ نے اقتصادی رابطہ کمیٹی کے 7 نومبر کے فیصلوں کی بھی توثیق کی۔

خیال رہے کہ ایک روز قبل وزیر اعظم نے پاکستان تحریک انصاف سندھ کے ارکان قومی اسمبلی کے اجلاس کی بھی صدارت کی تھی۔ اجلاس میں سندھ کی ترقی اور مسائل کے حل پر گفتگو ہوئی۔

اجلاس میں وزیر اعظم کو کراچی کے عوام کے پینے کے پانی اور سیوریج مسائل سے آگاہ کیا گیا جبکہ گورنر سندھ عمران اسماعیل نے وزیر اعظم کے اعلان کردہ کراچی پیکج کی پیشرفت پر بھی بریفنگ دی تھی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں