The news is by your side.

Advertisement

ایف آئی اے اور نیب کی انکوائریز پر سخت کارروائی کی جائے، قائم علی شاہ

کراچی : نیب اور ایف آئی اے نے اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ کو صوبے میں کرپشن اور بے ضابطگیوں کی چالیس سے زائد انکوائریاں بھیجی ہیں ان کیسز کی انکوائری کیلئے دو رکنی کمیٹی تشکیل دیدی گئی ہے۔

وزیر اعلیٰ سندھ نے ہدایت جاری کی ہے کہ ایف آئی اے اور نیب کی جانب سے محکمہ اینٹی کرپشن کو بھیجی جانیوالی انکوائریوں پر بلا تعطل سخت کاروائی کی جائے۔

تفصیلات کے مطابق وزیر اعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ کی صدارت میں کرپشن کیسز کے حوالے سے اجلاس ہوا جس میں چیئرمین اینٹی کرپشن ممتاز علی شاہ نے وزیر اعلیٰ سندھ کو بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ محکمہ اینٹی کرپشن نے 72 کرپشن کی ایف آئی آر درج کی ہیں جبکہ 209 انکوائریوں کو بھی کھولا گیا ہے جس کے باعث 72 مختلف محکموں کے افسران کو کرپشن کے الزام میں گرفتار کیا گیا ہے۔

ممتاز علی شاہ نے بریفنگ دیتے ہوئے بتایا کہ یہ کاروائیاں 2 ماہ کے دوران کی گئی ہے جب کہ مزید تحقیقات کا دائری وسیع کیا جارہا ہے۔

انھوں نے وزیر اعلیٰ سندھ کو بتایا کہ نیب اورآیف آئی اے اینٹی کرپشن سندھ کو کرپشن کی انکوائری بھیجنا شروع کردی ہیں جس پر اینٹی کرپشن نے کیسز کی انکوائریوں کیلئے دو رکنی کمیٹی قائم کی ہے ۔

بریفنگ کے دوران بتایا کہ نیب اور ایف آئی اے کی جانب سے بھیجی جانیوالی انکوائریوں میں کرپشن بدعنوانی زمینوں پر گھپلے کے مختلف کیسز شامل ہیں۔

انھوں نے بتایا کہ اینٹی محکمہ اینٹی کرپشن کی جانب سے محکمہ تعلیم، صحت ،بلدیات، آبپاشی سمیت ریونیو کے محکموں میں تحقیقات کی جارہی ہیں جن میں بوگس الاٹمنٹ اور کھاتوں کی تبدیلی کے کیسز شامل ہیں۔

اس موقع پر وزیر اعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ نے کہا کہ یہ خوش آئند عمل ہے کہ وفاقی تحقیقاتی اداروں نے محکمہ اینٹی کرپشن پر اعتماد کا اظہار کیا ہے۔

وزیر اعلیٰ سندھ نے ایف آئی اے اور نیب کی جانب سے بھیجی جانیوالی انکوائریوں پر بلا تعطل سخت کاروائی کی ہدایت جاری کرتے ہوئے کہا کہ اینٹی کرپشن اسٹیبلشمنٹ کے تمام ریکارڈ کو کمپیوٹرائز کیا جائے اور موصول ہونیوالی شکایات پر فوری مقدمات درج کئے جائیں ۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں