The news is by your side.

کاسترو، جس کی انقلابی جدوجہد اور امریکا کی بے بسی تاریخ کا حصّہ ہے

یکم جنوری 1959ء کو فیدل کاسترو نے کیوبا کے عوام کے سامنے ایک بالکونی میں کھڑے ہو کر اپنے انقلاب اور اپنی فتح کا اعلان کیا تھا اور اس کے بعد ایک کریبیئن جزیرہ کمیونسٹ ملک میں تبدیل ہو گیا۔

کیوبا پر اس وقت ایک آمر باتستا مسلط تھا جسے امریکا کی حمایت حاصل تھی۔ کیوبا وہ ملک ہے جو امریکا سے محض 145 کلومیٹر دور ہے اور فیدل کاسترو امریکا کے دشمنوں کی فہرست میں‌ شامل تھے جنھوں‌ نے امریکا کے حمایت یافتہ باتستا کو زیر کیا۔

کاسترو کا سنہ پیدائش 1926ء ہے۔ کیوبا کے ایک امیر اور جاگیردار گھرانے کے فرد ہونے کے ناتے اگرچہ ان کی زندگی عیش و عشرت اور ہر سہولت سے آراستہ تھی، لیکن کاسترو نے یہ سب اپنی انقلابی فکر اور جنون پر قربان کر دیا۔ انھوں نے ایک نہایت مشکل اور کٹھن راستہ منتخب کیا۔ وہ اپنے سماج میں اونچ نیچ اور لوگوں کے مصائب دیکھ کر باغی ہوگئے اور گھر بار چھوڑ کر انقلابی جدوجہد شروع کی جو کام یاب رہی۔

کیوبا میں باتستا کی حکومت میں عوام کی مشکلات بڑھ گئی تھیں اور بدعنوانی اور عدم مساوات کے علاوہ قانون حکام اور امرا کے تابع تھا جس میں سزا کا تصوّر صرف عوام کے لیے تھا۔ جرائم عام تھے اور جسم فروشی، جُوا اور منشیات کیوبا کے لیے سرطان بن چکی تھی۔

کاسترو نے اسے بدلنے کا عہد کیا اور امریکا کی پشت پناہی سے حکومت میں‌ آنے والے کو آمر کہتے ہوئے اس کے خلاف جدوجہد کا آغاز کردیا، ان کے ہم خیال اور ساتھی بھی ان کے حکم پر پہاڑوں میں جمع ہوگئے اور بغاوت کردی جس میں‌ ناکامی کے بعد کاسترو کو 1953ء میں جیل بھیج دیا گیا، دو سال بعد انھیں‌ عام معافی دے دی گئی اور ان کی رہائی عمل میں‌ آئی۔

فیدل کاسترو نے جیل سے باہر آنے کے بعد دوبارہ جدوجہد کا آغاز کیا اور اس بار انھیں‌ اپنے وقت کے گوریلا لڑائی کے ماہر چی گویرا کا ساتھ اور مدد بھی حاصل تھی۔ 1956ء میں جو گوریلا جنگ انھوں نے شروع کی اس میں بتیستا کو شکست دینے کے بعد کاسترو کیوبا کے حکم راں بنے۔

1960ء میں کاسترو نے کیوبا میں وہ تمام کاروبار قومی ملکیت میں لے لیے جن سے دراصل امریکا مالی طور پر فائدہ سمیٹ رہا تھا۔ اس اقدام پر کیوبا کو تجارتی و اقتصادی پابندیوں کا سامنا کرنا پڑا۔ فیدل کاسترو پر متعدد قاتلانہ حملے بھی ہوئے، لیکن وہ محفوظ رہے۔

1960ء میں کاسترو نے اپنے دور میں‌ بے آف پگ میں سی آئی کی سرپرستی میں ہونے والی ایک بغاوت کو بھی ناکام بنایا۔ 1976 میں کیوبا کی قومی اسمبلی نے انھیں صدر منتخب کر لیا۔ تاہم بعد میں جہاں ان کے انقلاب کے زبردست حامی اور پرستار کیوبا میں موجود تھے، وہیں ان کے لیے نفرت اور ناپسندیدگی بھی پیدا ہونے لگی۔ 80 کی دہائی کے نصف تک سیاسی منظر نامہ بدل رہا تھا جس میں کاسترو کا انقلاب بھی ڈوب گیا۔

بڑھتی ہوئی عمر کے ساتھ کاسترو کی طبیعت ناساز رہنے لگی تو 2008 میں وہ اپنی ذمہ داریوں سے الگ ہوگئے اور منظرِ عام سے بھی ہٹ گئے۔ کیوبا میں کمیونسٹ انقلاب کے اس سربراہ کا انتقال 2016 میں آج ہی کے دن ہوا۔ فیدل کاسترو کی یک جماعتی حکومت تقریباً نصف صدی تک رہی۔

کاسترو کی نوجوانی کا زمانہ ہنگامہ خیز اور نہایت مصروف گزرا اور بعد کے برسوں میں اپنی حکومت، عوام اور عالمی سطح پر اپنی مخالفت، حمایت اور سازشوں سے نمٹنے رہے، لیکن کاسترو کو جب موقع ملا تو ان کی یادداشتوں پر مبنی کتاب بھی سامنے آئی۔ یہ کیوبا کے عظیم لیڈر اور ایک انقلابی کی وہ داستان تھی جو تاریخ میں ہمیشہ زندہ رہے گی۔ اس میں‌ کاسترو نے کیوبا میں‌ آمر کے خلاف اپنی گوریلا جنگ سے متعلق تصاویر، نقشے اور اپنے لڑائی کے منصوبوں کا ذکر کیا ہے۔

کاسترو کی کتاب میں ان کے پچپن کی یادداشتیں‌ بھی شامل ہیں جس میں‌ یہ بھی بتایا ہے کہ وہ کیسے گوریلا جنگجو بنے۔ فیدل کاسترو وہ انقلابی لیڈر تھے جن کے بارے میں دنیا بھر میں‌ کتابیں شایع ہوئیں اور مشہور مصنّفین کے لاتعداد مضامین ان کی عام زندگی، انقلابی جدوجہد اور ان کے سیاسی سفر کے علاوہ بالخصوص امریکا اور کاسترو کی وہ کہانیاں سناتے ہیں جن پر ہمیشہ پردہ ڈالنے اور راز رکھنے کی کوشش کی گئی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں