The news is by your side.

Advertisement

ایکسپو سینٹر کراچی میں پاک فوج کے تعاون سے فیلڈ اسپتال کے قیام کا بڑا فیصلہ

سندھ میں کرونا وائرس کے کیسز کی تعداد 211 ہو گئی، صوبے میں تیسرا مریض بھی صحت یاب ہو گیا: وزیر اعلیٰ

کراچی: سندھ حکومت نے کرونا وائرس کے ہنگامی صورت حال سے نمٹنے کے لیے ایکسپو سینٹر کراچی میں پاک فوج کے تعاون سے فیلڈ اسپتال قائم کرنے کا فیصلہ کر کے تیاریاں شروع کر دی ہیں، ادھر کراچی میں کرونا وائرس کے مزید 3 کیس رپورٹ ہوئے ہیں۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق کمشنر کراچی افتخار شالوانی نے وفاقی وزارت تجارت کے حکام سے رابطہ کر کے ایکسپو سینٹر کراچی میں فیلڈ اسپتال کے قیام کی تجویز دی، جسے وفاق نے قبول کر لیا۔

ذرایع کا کہنا ہے کہ وفاق کی جانب سے تجویز منظور ہونے کے بعد ایکسپو سینٹر میں کرونا کے مریضوں کے لیے فیلڈ اسپتال قائم کرنے کی تیاریاں شروع کر دی گئی ہیں، وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے کمشنر کو فیلڈ اسپتال کے لیے بستر اور دیگر سامان خریدنے کی ہدایت بھی کر دی ہے۔

وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ کی زیر صدارت خصوصی اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ ایکسپو سینٹر میں اسپتال، آئسولیشن سینٹر پاک فوج کے تعاون سے قائم ہوگا، سندھ حکومت اور کور کمانڈر کراچی کی ٹیمیں مل کر کام کریں گی، سندھ حکومت کی ٹیم کی سربراہی سعید غنی کریں گے، کمشنر کراچی معاونت کریں گے، جب کہ کور کمانڈر کراچی ٹیم کی سربراہی بریگیڈیئر سمیع کریں گے۔ سندھ حکومت نے 20 لاکھ راشن بیگ عوام میں تقسیم کرنے کا بھی اعلان کیا، راشن بیگ میں چاول، آٹا، گھی، چینی، پتی، دال اور مصالحے شامل ہوں گے، وزیر اعلیٰ سندھ نے راشن بیگز تقسیم کرنے کی ہدایت کر دی۔

ایک اور پاکستانی کرونا وائرس کو شکست دینے میں کامیاب

ادھر کراچی میں کرونا وائرس کے مزید 3 کیس رپورٹ ہو گئے ہیں، محکمہ صحت سندھ کا کہنا ہے کہ کراچی میں تینوں کیسز مقامی ہیں، ان کی کوئی ٹریول ہسٹری نہیں، سندھ میں کرونا وائرس کے کیسز کی تعداد 211 ہو گئی، حیدر آباد میں ایک، کراچی میں وائرس کے کیسز کی تعداد 59 ہے، تفتان سے آئے زائرین سکھر میں 151 کیسز مثبت ہیں۔

آج کرونا وائرس پر اجلاس میں وزیر اعلیٰ سندھ مراد علی شاہ نے کہا کہ وائرس میں مبتلا سندھ میں تیسرا مریض بھی صحت یاب ہو گیا ہے، جو اچھی علامت ہے۔ ہانگ کانگ، سنگاپور، تائیوان اور جنوبی کوریا نے اس انفیکشن کی رفتار پر کنٹرول کیا ہے، صرف کم سے کم سفر اور مسلسل اسکریننگ سے کرونا وائرس کو روکا جا سکتا ہے، بڑے اجتماع پر پابندی، سخت قرنطینہ کا عمل ہونا چاہیے۔

دوسری طرف سکھر کی ضلعی انتظامیہ نے کہا ہے کہ تفتان سے مزید 757 زائرین کی قرنطینہ سینٹر آمد کے بعد تعداد 1060 ہو گئی ہے، اسکرنینگ کا عمل شروع کر دیا گیا ہے، بس کے ڈرائیورز اور کنڈیکٹرز کے سیمپلز اور بایو ڈیٹا لے لیا گیا ہے، مسافر کوچز کے ڈرائیورز، کنڈیکٹرز کی تعداد 60 ہے، زائرین کو رہایش کے ساتھ کھانے پینے کی اشیا دی گئی ہیں، کراچی سے ماہر ڈاکٹروں کی ٹیم بھی سکھر کے قرنطینہ پہنچ چکی ہے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں