لڑکی کی بازیابی کے لیے احتجاج، فاروق ستار کے خلاف مقدمہ درج -
The news is by your side.

Advertisement

لڑکی کی بازیابی کے لیے احتجاج، فاروق ستار کے خلاف مقدمہ درج

دعا کے اہل خانہ کا دکھ درد بانٹنے گیا، عوامی نمائندے کی حیثیت سے مظاہرے میں شرکت کی، فاروق ستار

کراچی: ایم کیو ایم پاکستان کے سابق ڈپٹی کنونیئر اور رہنما ڈاکٹر فاروق ستار کے خلاف پی آئی بی تھانے میں ہنگامہ آرائی اور جلاؤ گھیراؤ کی دفعات کے تحت مقدمہ درج کرلیا گیا۔

ایس پی گلشن کے مطابق فاروق ستار نے گزشتہ روز لڑکی کے اغوا کا معاملہ اٹھا کر لوگوں کو اکسایا جس کے بعد نامعلوم افراد نے سینٹرل جیل اور اطراف کی سڑکوں کو زبردستی بند کیا۔

اُن کا کہنا تھا کہ نامعلوم افراد نے ہنگامہ آرائی کرتے ہوئے لاٹھیوں کا استعمال کیا اور سڑک پر چلنے والی گاڑیوں کے شیشے توڑے اس کے علاوہ مشتعل افراد نے ٹائر نذر آتش کر کے قانون نافذ کرنے والے اداروں کے خلاف نعرے بھی لگائے۔

عوامی نمائندے کی حیثیت سے مظاہرے میں شریک ہوا، شوق سے مقدمات درج کریں

فاروق ستار

دوسری جانب ڈاکٹر فاروق ستار نے مقدمہ درج ہونے پر ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ ‘لڑکی کے اہل خانہ کا دکھ دیکھ کر مظاہرے میں شامل ہوا، ایس پی گلشن چاہیں تو شوق سے میرے میرے خلاف اور بھی مقدمات درج کرلیں‘۔

اُن کا کہنا تھا کہ گزشتہ روز دعا کی گمشدگی کے بعد ہونے والا مظاہرے میں عوامی نمائندے کی حیثیت سے کل کے مظاہرے میں شامل ہوا وہ مظاہرہ کسی طور پر سیاسی نہیں تھا، میں خود مظاہرہ ختم کرانے کے لیے پی آئی بی تھانے گیا۔

مزید پڑھیں: کراچی: پی آئی بی کالونی سے لاپتہ ہونے والی لڑکی اور لڑکا بازیاب

واضح رہے کہ گزشتہ روز پی آئی بی کی رہائشی 15 سالہ دعا نامی لڑکی لاپتہ ہوگئی تھی، والد کا کہنا تھا کہ اُن کی بیٹی اسکول دیر سے پہنچی تو ٹیچر نے اُسے واپس بھیج دیا پر وہ واپس گھر نہ آسکی۔

شہر قائد میں بچوں کے مبینہ اغوا کی وارداتوں سے خوفزدہ پی آئی بی کے علاقہ مکینوں نے احتجاج کیا اور دعاکو بازیاب کروانے کا مطالبہ بھی کیا۔

طالبہ کی گمشدگی کے لیے ہونے والے مظاہرے میں ایم کیو ایم پاکستان کے رہنما ڈاکٹر فاروق ستار بھی پہنچے اور انہوں نے 24 گھنٹے کے اندر بازیاب کروانے کا مطالبہ بھی کیا۔

یہ بھی پڑھیں: کراچی: 15 سال کی میٹرک طالبہ دعا لاپتا، 24 گھنٹے میں بازیاب کرایا جائے، فاروق ستار

بعد ازاں پولیس کی ایک ٹیم نے کراچی کے علاقے تیسر ٹاؤن سے طالبہ کو بازیاب کروایا، دعا کا کہنا تھا کہ وہ اپنی مرضی سے وقار کے ساتھ گھر چھوڑ کر گئی کیونکہ وہ اپنے ساتھی طالب علم سے پیار کرتی ہے اور دونوں شادی کے خواہش مند ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں