The news is by your side.

Advertisement

اٹھارویں ترمیم کوئی مذہبی دستاویزنہیں،اس میں تبدیلی لائیں گے، فردوس شمیم نقوی

کراچی : سندھ اسمبلی میں قائد حزب اختلاف فردوس شمیم نقوی کا کہنا ہے اٹھارویں ترمیم کوئی مذہبی دستاویزنہیں، انسانوں نے بنایا تھا، اس میں تبدیلی لائیں گے، پاکستان کی عوام کومشکل وقت گزارناہوگا،ماضی کی حکومتوں نےبہت زیادہ قرضہ لیاہے۔

تفصیلات کے مطابق سندھ اسمبلی میں قائد حزب اختلاف فردوس شمیم نقوی نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا احساس ہےبرآمدات میں ابھی اچھااضافہ نہیں ہورہا، ہمارےاقدامات سےان مشکلات کوبھی بہترکیاجائےگا، ملک پرقرضوں کی ادائیگی کابوجھ بہت زیادہ ہے۔

فردوس شمیم نقوی کا کہنا تھا کہ پاکستان کی عوام کومشکل وقت گزارناہوگا، ماضی کی حکومتوں نےبہت زیادہ قرضہ لیاہے ، ہم آمدنی بڑھا رہے ہیں اورقرضہ جات ختم کریں گے۔

اٹھارویں ترمیم کے حوالے سے پی ٹی آئی رہنما نے کہا اٹھارویں ترمیم کوئی مذہبی دستاویزنہیں، اٹھارویں ترمیم کو انسانوں نے بنایا تھا۔

ان کا کہنا تھا این ایف سی پرگفتگووالےبتائیں2006کےبعدپی ایف سی کہاں ہے؟ پی ایف سی میں ہرڈسٹرکٹ کوپیسےتودینےہوتےہیں، پیپلزپارٹی صرف باتیں کرتی ہےکام نہیں کرتی، سپریم کورٹ کوحکم دیناپڑاکہ بجلی کےبل سندھ حکومت دے۔

پیپلزپارٹی صرف باتیں کرتی ہےکام نہیں کرتی

سندھ اسمبلی میں قائد حزب اختلاف نے کہا مہنگائی،آئی ایم ایف کی باتیں کرتےہیں، ہم نےکہاتھاآئی ایم ایف کےپاس نہیں جائیں گے، ہم آج بھی ان چیزوں کو مانتے ہیں یہی ہماراعزم ہے۔

فردوس شمیم کا کہنا تھا ملک کوتباہ نہیں کرسکتے،ثابت بھی کیاکہ پیسےواپس لاسکتےہیں، پاکستان کی معیشت کواستحکام دیناہے۔

انھوں نے کہا پپپلز پارٹی زرداری کی گرفتاری کے خوف میں مبتلا ہے، یہ لوٹ مار کے علاوہ کچھ نہیں کرسکتی، لانگ مارچ کی دھمکیوں سے نہیں ڈرتے، جواب ضرور دیں گے۔

اسلام آباد میں مارچ کی دھمکی دینے والے سن لیں ہمیں بھی مارچ کے ذریعے جواب دینا آتا ہے

فردوس شمیم نقوی کا کہنا تھا کہ سندھ میں زمین سستی کرکے خریدی جارہی ہے، پانی چوری کیا جارہا سڑکیں اور اسپتال تباہ حال ہیں، اسلام آباد میں مارچ کی دھمکی دینے والے سن لیں ہمیں بھی مارچ کے ذریعے جواب دینا آتا ہے۔

خیال رہے گذشتہ روز چیئرمین پیپلزپارٹی بلاول بھٹو نے گھوٹکی میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے کہا تھا اٹھارویں ترمیم ختم کرنے اورون یونٹ لانےکی کوشش کی گئی تودمادم مست قلندر ہو گا۔

ان کا کہنا تھا آپ کہتےتھےبھیک نہیں مانگوں گا، آج ہر در پر بھیک مانگنے جارہےہیں، آئی ایم ایف کےپاؤں میں بیٹھےہیں، آمروں کے قانون سےجھکا نہیں سکتے، مقابلہ کریں گے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں