The news is by your side.

Advertisement

کراچی میں 12 سال کے دوران پانی کی ایک بوند کا اضافہ نہیں ہوا، فردوس شمیم

کراچی: سندھ اسمبلی میں اپوزیشن لیڈر فردوس شمیم نقوی کا کہنا ہے کہ کوڑا اٹھانے کی بات ہویا پانی کا مسئلہ ہم تہہ تک جاتے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق کراچی میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے فردوس شمیم نقوی نے کہا کہ شہر میں سب سے اہم مسئلہ پانی کا ہے، اہم منصوبو ں میں تاخیر نہیں کی جاسکتی۔

انہوں نے کہا کہ کوڑا اٹھانے کی بات ہویا پانی کا مسئلہ ہم تہہ تک جاتے ہیں، کراچی میں 12 سال کے دوران پانی کی ایک بوند کا اضافہ نہیں ہوا۔

اپوزیشن لیڈر نے کہا کہ کے 4 کا منصوبہ 20 فیصد سے زیادہ نہیں مکمل نہیں ہوا، کے 4 منصوبے پر پچھلے سال کئی سوال اٹھائے گئے تھے۔

فردوس شمیم نقوی نے کہا کہ حلف لینے کے بعد سب سے پہلے ایم ڈی واٹر بورڈ سے ملاقات کی، اب کے 4 منصوبے کے ڈیزائن کی تبدیلی کی بات ہورہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ شہرکوآبادی کی تناسب سے ہزار ملین گیلن پانی ملنا چاہیئے، کراچی کو 450ملین گیلن پانی مل رہا ہے، کے فورمنصوبے کی لاگت 25 سے 100 بلین تک پہنچ گئی ہے، حکومت ڈیم کے لیے زمین لے سکتی ہے تو کے فورکے لیے بھی لی جاسکتی ہے۔

فردوس شمیم نقوی نے کہا کہ تاجروں کے مطالبات میں سے ایک تسلیم نہیں کیا گیا، 50 ہزارسے اوپر مال دیں گے تو این آئی سی کا نمبر دینا ہوگا۔

اپوزیشن لیڈر نے کہا کہ ہم چاہتے ہر چیز ڈاکومنٹ ہو اور جو ٹیکس بنتا ہو وہ دیں، چاہتے ہیں جوٹیکس نیٹ سے باہر ہیں انہیں ٹیکس نیٹ میں لایا جائے۔

فردوس شمیم نقوی نے کہا کہ مشکل حالات میں مشکل فیصلے کرنے پڑتے ہیں، ہڑتال کرنے والے وہ ہیں جو ٹیکس نیٹ میں شامل ہونے سے انکاری ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں