The news is by your side.

Advertisement

تاریخی مسجد آیا صوفیا میں 86سال بعد نماز کی ادائیگی، روح پرور مناظر

استنبول : تاریخی مسجد آیا صوفیا میں 86 سال بعد ترک صدر سمیت ہزاروں افراد نے نمازجمعہ ادا کی ، اس موقع پر روح پرور مناظر دیکھنے کو ملے۔

تفصیلات کے مطابق استنبول کی تاریخی مسجد آیا صوفیا 86سال بعد نمازیوں کے لئے کھول دی گئی ، ہزاروں کی تعداد میں لوگوں نے نماز جمعہ ادا کی، صدر رجب طیب ایردوان خاص طور پر نماز جمعہ میں شریک ہوئے۔

اس موقع پر مسجد میں روح پرور مناظر دیکھنے میں آئے اور لوگوں نے نوافل بھی ادا کئے، ترکی کی اہم سیاسی شخصیات سمیت ترکی کی پوری کابینہ بھی ترک صدر کے ہمراہ آیا صوفیہ مسجد میں موجود تھی۔

آیا صوفیہ مسجد میں ترک صدررجب طیب اردوان نے تلاوت قرآن بھی کی۔

نماز کی ادائیگی کیلیے استنبول کےچپے چپے سے مسلمانوں آئے جبکہ اگلی صفوں میں جگہ کیلئے نمازی فجر سے پہنچ گئے تھے، اس موقع پر مسجد سمیت پورے شہر میں سیکیورٹی کے سخت انتظامات کئے گئے تھے۔

ترک حکومت نے پانچ وقت کی نمازوں کے لیے آئمہ اور مؤذن حضرات کا تقرر کردیا ہے۔

خیال رہے آیا صوفیہ کے سامنے ایک خوبصورت چمن ہے، اس کے بعد اس کا مرکزی دروازہ ہے، دورازے کے دونوں اطراف وہ پتھر نصب ہیں جہاں پہرے دار کھڑے ہوتے تھے۔ اندر وسیع ہال ہے جو مربع کی شکل کا ہے۔

بیچ کے گنبد کا قطر ایک سو سات فٹ اور چھت کی اونچائی ایک سو پچاسی فٹ ہے، پوری عمارت میں ایک سو ستر ستون ہیں، چاروں کونوں پر چھ ڈھالوں پر اللہ، محمد، ابو بکر، عمر، عثمان اور علی نہایت خوشخط لکھ کر لگایا ہوا ہے جبکہ اوپر چھت کی طرف بڑے بڑے خوبصورت روشندان بنے ہوئے ہیں۔

عمارت میں سنگ مرمر استعمال کیا گیا ہے، بیشمار تختیاں لگی ہوئی ہیں جن پر عربی خط میں لکھا اور نقش ونگار کیا گیا ہے۔

آیا صوفیہ کی عمارت فتح قسطنطنیہ کے بعد سےچار سو اکیاسی سال تک مسجد اور مسلمانوں کی عبادت گاہ رہی لیکن خلافت عثمانیہ کے خاتمے کے بعد مصطفٰی کمال اتاترک نے مسجد بند کر کے اسے عجائب گھربنا دیا تھا۔

تاہم آٹھ دہائیوں بعد ترک عدالت نے دو ہزار بیس میں آیا صوفیا کی دوبارہ انیس سو پینتیس سے قبل والی حیثیت بحال کی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں