The news is by your side.

Advertisement

بھارتی سپریم کورٹ کا فیصلہ پاکستان کے مؤقف کی فتح ہے، شاہ محمود قریشی

اسلام آباد : وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے کہا کہ بھارتی سپریم کورٹ کا فیصلہ پاکستان کے مؤقف کی فتح ہے، فیصلے سے کشمیریوں کا حوصلہ مزید بڑھے گا، عدالتی فیصلے پر عملدرآمد نہیں کرتے تو بھارتی آئینی نظام درہم برہم ہوجائے گا۔

تفصیلات کے مطابق وزیر خارجہ شاہ محمود قریشی نے بھارتی سپریم کورٹ کے فیصلے پر درعمل کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ارتی سپریم کورٹ کا فیصلہ بہت بڑی کامیابی ہے اور فیصلے سے پاکستان کےمؤقف پرمہر لگ گئی۔

وزیر خارجہ کا کہنا تھا کہ حقائق سامنے رکھے جاتے تو مقبوضہ کشمیر میں بلیک آؤٹ نہ ہوتا، بھارتی سپریم کورٹ کا فیصلہ پاکستان کے مؤقف کی فتح ہے، فیصلے سے ہمارے مؤقف کو زبردست تقویت ملےگی اور کشمیریوں کا حوصلہ مزید بڑھے گا۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ غلام نبی آزاد کو سرینگرایئرپورٹ سے واپس بھیج دیاگیاتھا، غلام نبی آزاد کو سرینگرجاکر دنیا کو آئینہ دکھانا ہوگا، میڈیاوفد کو بھی غلام نبی آزاد کیساتھ جانے کی اجازت ہونی چاہیے، میڈیاوفد مقبوضہ وادی جاکر ہر منظر کو کیمرے کی آنکھ میں محفوظ کرے۔

ان کا کہنا تھا کہ غلام نبی کوکشمیر کے دورے کےبعد رپورٹ بھارتی سپریم کورٹ آنی چاہیے، رپورٹ پر بھارتی سپریم کورٹ وادی سے کرفیو اٹھانے کا حکم دے سکتی ہے۔

وزیرخارجہ نے مزید کہا کہ بھارتی غیرقانونی اقدام پربھارتی سپریم کورٹ کی رائے ضروری ہے، عدالتی فیصلے پر عملدرآمد نہیں کرتے تو بھارتی آئینی نظام درہم برہم ہو جائے گا۔

مزید پڑھیں : بھارتی سپریم کورٹ کا مقبوضہ کشمیرمیں حالات ہرصورت معمول پرلانے کا حکم

شاہ محمود قریشی کا کہنا تھا کہ بھارتی حکومت تمام عالمی قوانین کو پامال کررہی ہے، کشمیری عوام اورحریت رہنماؤں کی آوازدنیاتک پہنچ گئی توکایا پلٹ جائے گی ، یورپی یونین میں کل مقبوضہ کشمیر پر بحث ہوگی۔

خیال رہے بھارتی سپریم کورٹ کے تین رکنی بنچ نے چیف جسٹس رنجن گگوئی کی سربراہی میں مقبوضہ کشمیر سے آرٹیکل 370 ختم کرنے سے متعلق مقدمے کی سماعت ہوئی ، جس میں عدالت نے مودی حکومت کو مقبوضہ وادی میں حالات ہر صورت معمول پر لانے کا حکم صادر کردیا ۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں