The news is by your side.

Advertisement

غیر ملکی فنڈنگ کیس: شواہد طلب کرنے پر تحریک انصاف کی کل تک مہلت طلب

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف کے غیر ملکی فنڈنگ کیس میں سپریم کورٹ نے ریمارکس دیے کہ پاکستان تحریک انصاف عدالت کو غیر ملکی امداد کی وصولی، فنڈنگ کے ذرائع اور رقوم کے آڈٹ پر مطمئن کرے۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں چیف جسٹس کی سربراہی میں 3 رکنی بینچ نے عمران خان کی آف شور کمپنی اور پاکستان تحریک انصاف کی غیر ملکی فنڈنگ سے متعلق حنیف عباسی کی درخواست پر سماعت کی۔

دوران سماعت الیکشن کمشن کے وکیل ابراہیم ستی نے عدالت کو بتایا کہ پاکستان تحریک انصاف کی غیر ملکی فنڈنگ پارٹی کے اثاثوں میں ظاہر نہیں کی گئی اور نہ ہی کسی دوسری سیاسی جماعت نے اپنی غیر ملکی فنڈنگ سے متعلق الیکشن کمیشن کو بتایا۔

ان کے مطابق اگر کسی بھی سیاسی جماعت کی ممنوعہ ذرائع سے فنڈنگ ثابت ہوجائے تو الیکشن کمیشن سیاسی جماعت کو تحلیل اور فنڈنگ کو ضبط کر سکتا ہے۔

چیف جسٹس نے پاکستان تحریک انصاف کے وکیل انور منصور کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ آپ کو 3 بنیادی سوالات کے جواب دینا ہوں گے۔ پہلا سوال، کیا تحریک انصاف کو غیر ملکی فنڈنگ ہوئی ہے؟ دوسرا سوال کیا فنڈنگ ایجنٹ کے ذریعے ہوئی ہے؟ تیسرا سوال یہ کہ جو رقم پاکستان آئی ہے کیا اس کے بارے میں چارٹرڈ اکاؤنٹنٹ کو تفصیلات فراہم کی گئی ہیں؟

عدالت نے غیر ملکی فنڈنگ کے حوالے سے حنیف عباسی کے وکیل سے کیس الیکشن کمیشن کو بجھوانے سے متعلق رائے طلب کر لی۔ حنیف عباسی کے وکیل نے جواب دینے کے لیے کل تک کے لیے مہلت مانگ لی۔

تحریک انصاف کے وکیل انور منصور نے بھی اپنی معاونت کے لیے ٹیکس ایکسپرٹ کی اجازت مانگ لی۔ عدالت نے کیس کی سماعت کل صبح ساڑھے 11 بجے تک کے لیے ملتوی کر دی۔


Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں