The news is by your side.

غیر ملکی میڈیا وفد آج پھر ایل او سی کے دورے کے لیے اسلام آباد سے روانہ

اسلام آباد: لائن آف کنٹرول کا دورہ کرنے اور بھارتی خلاف ورزی کا مشاہدہ کرنے کے لیے آج غیر ملکی میڈیا کا وفد پھر اسلام آباد سے روانہ ہو گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق 5 اگست کو بھارتی غیر قانونی اقدام اور بھارتی مظالم کا سال پورا ہو رہا ہے، غیر ملکی میڈیا غیر قانونی اقدامات کے سال پورا ہونے سے قبل ایل او سی کا دورہ کر رہا ہے۔

پاکستان کی جانب سے غیر ملکی میڈیا اور یو این مشن کو ایل او سی اور مقامی آبادی تک مکمل رسائی دی جا رہی ہے، غیر ملکی میڈیا چری کوٹ سیکٹر میں بھارتی خلاف ورزیوں کا مشاہدہ کرے گا، صحافی اشتعال انگیزیوں کے شکار افراد سے ملیں گے اور نقصان کا جائزہ لیں گے، تاہم یو این مشن بھارتی اجازت نہ ہونے کے سبب ایل او سی کے پار کام نہیں کر سکتا۔

دوسری طرف بھارت نے یو این سیکریٹری جنرل انتونیو گوترس کی اپیل کی دھجیاں بکھیر دی ہیں، یو این سیکرٹری جنرل نے کرونا کے پیش نظر عالمی سطح پر جنگ بندی کی اپیل کی تھی، لیکن اس کے برعکس بھارتی فوج شہری آبادی پر اشتعال انگیزیاں جاری رکھے ہوئے ہے، بھارت کی جانب سے غیر ملکی میڈیا کو ایل او سی پار دوسری بار بھی اجازت نہیں دی گئی تاہم پاکستان نے مکمل رسائی دے دی۔

یاد رہے کہ بھارت نے فرانسیسی صحافی پال کومیٹی کو مقبوضہ کشمیر میں بھارتی بربریت کی ویڈیو بنانے پر قید کیا گیا تھا، فرانسیسی صحافی کو 10 دسمبر 2017 کو سری نگر سے گرفتار کیا گیا، ان کا قصور میرواعظ عمر فاروق سے ملنا اور بھارتی فوج پر پتھراؤ کی فلم بنانا تھا۔

کومیٹی بھارتی قابض فورسز کی پیلٹ گنز کے شکار افراد سے بھی ملے تھے، بھارت نے بعد ازاں فرانسیسی صحافی پال کومیٹی کو ملک بدر کر دیا، پال کومیٹی نے پاکستان سے بھی لائن آف کنٹرول تک آزادانہ رسائی مانگی جس پر پاکستان نے ایل او سی، قبائلی اضلاع اور واہگہ سرحد تک انھیں آزادانہ رسائی دی۔

کومیٹی نے ‘کشمیر دنیا کے چھت پر جنگ’ کے عنوان سے ایک دستاویزی فلم کا اجرا کیا تھا، جس میں انھوں نے بھارتی قابض فوج کے ہاتھوں کشمیریوں کے قتل کا پردہ فاش کیا، فلم میں پیلٹ گنز کے زخمیوں، ایکسرے، بینائی کھونے والوں کی تصاویر استعمال کی گئی تھیں، بچوں پر پیلٹ گنز کا استعمال، معذوری، پھیپھڑوں، گردے، جگر میں سیسہ دکھایا گیا، بھارتی فوجی جیپ کے آگے باندھے جانے والے کشمیری نوجوان کو بھی دکھایا گیا، دستاویزی فلم میں ایسا معاشرہ دکھایا گیا جو مسلسل زیر نگرانی ہے۔

مقبوضہ کشمیرمیں ہر طرف کیمرے اور ڈرونز کا جال بچھا ہوا ہے اور مظاہروں، جنازوں تک کی ویڈیوز بنتی ہیں، فلم دکھاتی ہے کہ ہر جنازہ پاکستانی پرچم میں لپٹا ہے، ہر کوئی آزادی، مجاہد آزادی بننا، حق خودارادیت چاہتا ہے۔ واضح رہے کہ بھارت رواں سال لائن آف کنٹرول پر 1744 خلاف ورزیاں کر چکا ہے، ایل او سی پر اشتعال انگیزیوں میں 14 شہری شہید، 135 زخمی ہوئے، شہدا میں 5 بچے، 5 خواتین، 4 مرد شامل ہیں، زخمیوں میں 36 بچے، 44 خواتین، 55 مرد شامل ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں