site
stats
صحت

دوست آپ کے درد کی دوا بھی ہوسکتے ہیں

لندن: سائنسدانوں کے مطابق آپ کے دوست آپ کے درد کے لیے ایک قدرتی مداوا بھی ہیں کیونکہ درد کش ادویات کھانے کے مقابلے میں بڑا حلقہ احباب رکھنا زیادہ بہتر ہو سکتا ہے۔

آکسفورڈ یونیورسٹی میں کی جانے والی ایک نئی تحقیق کے مطابق دوستوں کا زیادہ بڑا حلقہ رکھنے والے لوگ درد کو کم محسوس کرتے ہیں۔ تحقیق میں پتہ چلا کہ زیادہ دوستوں کے ساتھ میل جول رکھنے والے لوگوں میں درد برداشت کرنے کی صلاحیت زیادہ بہتر ہوتی ہے۔

friends-2

تحقیق میں دیکھا گیا کہ زیادہ دوستوں کے ساتھ بات چیت کرنے والے لوگوں میں اینڈورفین، جسم کے مرکزی اعصابی نظام میں پیدا ہونے والا ایک کیمیکل کے اخراج کی سطح زیادہ ہوتی ہے جس کی وجہ سے وہ درد کو کم محسوس کرتے ہیں۔

اینڈورفین ایک کیمیائی مادہ ہے جو سخت ورزش، جذباتی کشمکش اور درد کی حالت میں قدرتی طور پر خارج ہوتا ہے۔ یہ مادہ جذبات کے ساتھ منسلک ہے جو درد کے احساس کو کم کرتا ہے اور طمانیت اور آسودگی کا احساس دلاتا ہے۔

friends-3

تحقیق میں یہ بھی دیکھا گیا کہ جسمانی طور پر فٹ افراد اور وہ لوگ جنہوں نے خود کو ڈپریشن کا شکار بتایا تھا، ان میں کم دوست بنانے کا رجحان ملا۔

اس سے قبل کی جانے والی ایک تحقیق کے مطابق دوستوں کے بات چیت کرنے سے ہمارے مثبت جذبات متحرک ہوتے ہیں اور دماغ اینڈورفین بناتا ہے جو اینڈورفین اپیٹ ریسپٹرس کے ساتھ مل کر درد کش اثر پیدا کرتا ہے اسی لیے اس کیمیکل کو قدرتی پین کلر کہتے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top