site
stats
پاکستان

پاکستان میں جذام کے خلاف ڈاکٹررتھ فاؤ کے لئے جرمنی کا اعلیٰ ترین اعزاز

پاکستان میں جذام اورٹی بی کے امراض کے خاتمے کیلئے فعال کردارادا کرنے والی خاتون ڈاکٹررتھ فاؤ کوجرمنی کے اعلیٰ ترین ایوارڈ اسٹیفرمیڈل گولڈ ایوارڈ سے نوازا گیا ہے۔

ڈاکٹررتھ کیتھرینا مارتھا فاؤ ایک جرمن ڈاکٹر، سرجن اورسوسائٹی آف ڈاٹرزآف دی ہارٹ آف میری نامی تنظیم کی رکن ہیں۔

انہوں نے 1962ء سے اپنی زندگی پاکستان میں کوڑھیوں کے علاج کے لیے وقف کی ہوئی ہے۔ 1996ء میں عالمی ادارۂ صحت نے پاکستان میں کوڑھ کے مرض کو قابو میں قراردے دیا، واضح رہےکہ پاکستان اس مرض میں سرفہرست ایشیائی ممالک میں شامل تھا۔

رتھ فاؤ 1929ء کو جرمن شہر لیپزگ میں پیدا ہوئیں طب کی تعلیم حاصل کرنے کے بعد انہوں نے دکھی انسانوں کی خدمت کرنے بیڑہ اٹھایا اور اس کے لیے وہ عیسائی مبلغین کی ایک تنظیم میں شامل ہوگئی۔

سن 1962ء میں وہ کراچی آ گئی اور مریضوں کی خدمت شروع کر دی یہاں آکراس نے دیکھا کہ کوڑھ کے مریض بہت بری حالت میں ہیں تو انہوں نے کوڑھ کے مریضوں کو صحتیا ب کرنا ہی اپنی زندگی کا مقصد بنا لیا۔

وہ سندھ سرحد، بلوچستان اور شمال میں دور دراز علاقوں میں گئیں اورایسے مریضوں کے لیے ادویات فراہم کیں اوراسپتال بنائے جو کہ اس مرض کاعلاج کرانے سے قاصرتھے اوراس مقصد کے لئے پاکستان سے باہربالخصوص جرمنی پیسے اکٹھے کرتی ہیں۔

حکومتِ پاکستان نے ڈاکٹررتھ فاؤکو ہلال امتیاز ایوارڈ سے بھی نوازا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top