site
stats
حیرت انگیز

بھارت میں مردہ سمجھ کرزندہ لڑکی چتا میں جلادی

نئی دہلی: بھارتی ریاست اتر پردیش میں ایک ہولناک حادثہ پیش آیا جہاں ڈاکٹروں کی غفلت کے سبب 21 سالہ جوان لڑکی کو چتا کی آگ میں جھونک دیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق اترپردیش پولیس کے پاس اس ہولناک واقعے کی رپورٹ درج کرائی گئی ہے کہ نویڈا کی رہائشی 21 سالہ شادی شدہ لڑکی کو جان بوجھ کر مردہ قراردیا گیا اور اسے چتا میں زندہ جلا دیا گیا۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق لڑکی کی موت کو شاردہ اسپتال نے پھیپڑے ناکارہ ہوجانے کے سبب مردہ قراردیا تھا۔ ڈیتھ سرٹیفیکٹ کے اعتبار سے اس کی موت اتوار کی رات 11:45 منٹ پر ہوئی۔ موت کے آٹھ گھنٹے بعد ضلع علی گڑھ میں لڑکی کی میت کو ہندو رسومات کے مطابق آگ میں جلایا جارہا تھا۔

بزرگ خاتون مرنے کے بعد پھرزندہ ہوگئی

آگ جلنے کے دوران لڑکی کے بھائی کو شک گزرا اوراس نے فی الفور علی گڑھ پولیس سے مدد طلب کی تاہم جب تک پولیس پہنچی‘ میت 70 فیصد جل چکی تھی۔

پولیس کا کہنا ہے کہ اسی روز دو ڈاکٹروں پر مشتمل پینل نے نعش کا پوسٹ مارٹم کیا اور موت کی وجہ زندہ جلنے کے سبب پہنچنے والا ذہنی صدمہ بتائی۔ رپورٹ اس بنیاد پر مرتب کی گئی کہ لڑکی کی سانس کی نالی اور پھیپڑوں میں راکھ کے ذرات ملے ہیں جو کہ صرف اور صرف سانس لینے کی صورت میں ممکن ہے۔

مرنے کے بعد کھال بیچنے والا شخص

میڈیکل رپورٹ کی بنیاد پر لڑکی کے چچا نے اس کے شوہر اور اس کے خاندان کے دس دیگر افراد کے خلاف ایف آئی آر درج کرائی ہے جس میں انہیں جنسی زیادتی اور قتل کا مورد الزام ٹہرایاگیا ہے۔

دوسری جانب شاردہ اسپتال اپنے موقف پر قائم ہے کہ جس وقت لڑکی کو اسپتال سے واپس لے جایا گیا وہ مرچکی تھی۔ ترجمان کا میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ ’’ مریض کو انتہائی نازک حالت میں اسپتال لایا گیا ‘ ہمارے ڈاکٹروں نے جاں توڑ کوشش کی تاہم وہ جاں بلب نہ ہوسکی۔ ہم ابھی بھی اپنے موقف پر قائم ہیں کہ مریض کی موت اتوار کی رات پھیپڑوں کے انفیکشن کے سبب ہوئی

اب مفصل تحقیقات ہی طے کرسکتی ہیں کہ اصل واقعہ کیا ہے لیکن اگر دوسری میڈیکل رپورٹ اور الزام درست ہے تو یہ طب کے مقدس پیشے کی تاریخ میں مرتب کی جانے والی بھیانک ترین کوتاہیوں میں سے ایک ہوگی۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top