The news is by your side.

Advertisement

عالمی ہوائی ٹریفک کب تک معمول پر آ سکے گا؟ انٹرنیشنل ادارے کا انکشاف

کینیڈا: انٹرنیشنل ایئر ٹرانسپورٹ ایسوسی ایشن (IATA) نے انکشاف کیا ہے کہ عالمی ہوائی ٹریفک کی بحالی توقع سے کم رہی ہے، کرونا بحران کے باعث عالمی ہوائی سفر کی بحالی میں توقع کے برعکس زیادہ وقت لگ سکتا ہے۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق بین الاقوامی ادارے ایاٹا نے کہا ہے کہ عالمی ہوائی ٹریفک 2024 سے قبل کرونا وائرس کی وبا سے پہلی والی سطح پر نہیں آ پائے گا، خیال رہے کہ اس سے قبل ایاٹا کی جانب سے اس سلسلے میں 2023 کی پیش گوئی کی تھی۔

ایاٹا نے کہا ہے کہ 2019 کے مقابلے میں رواں سال مسافروں کی تعداد میں 55 فی صد کی کمی متوقع ہے، تنظیم نے اس بات پر بھی زور دیا کہ اگرچہ 2021 میں مسافروں کی تعداد 62 فی صد تک بڑھ جائے گی تاہم پھر بھی یہ 2019 کے مقابلے میں تقریباً ایک تہائی کم ہوگی۔

انٹرنیشنل ایئر ٹرانسپورٹ ایسوسی ایشن نے یہ ‘مایوس کن’ پیش گوئی اس تناظر میں کی ہے کہ امریکا اور ترقی پذیر ممالک میں کرونا وائرس کی روک تھام کی رفتار بہت سست ہے۔

یہ بھی دیکھا گیا ہے کہ اگرچہ امریکا سے باہر ترقی یافتہ ممالک نے کرونا وائرس کی وبا پر قابو پالیا ہے لیکن اس کی دوبارہ آمد اور پھیلاؤ کا خطرہ موجود ہے، دوسرا امر یہ ہے کہ اہم ابھرتی معیشتوں کا امریکا کے ساتھ مل کر جو عالمی ایئر ٹریول مارکیٹ ہے وہ 40 فی صد ہے، دیگر عوامل میں یہ بھی شامل ہے کہ کرونا وائرس لاحق ہونے کے خطرے کے پیش نظر کاپوریٹ ٹریول کم ہو چکا ہے، صارفین کا اعتماد بھی کم زور ہو چکا ہے کہ اگر کرونا سے متاثر ہوئے تو نوکریاں جا سکتی ہیں۔

خیال رہے کہ جون میں انٹرنیشنل ٹریفک 96.8 فی صد تک سکڑ گیا تھا، ایاٹا کا کہنا ہے کہ کرونا وائرس کے خلاف کام یاب ویکسین کی تیاری ہی عالمی ایئر ٹریفک کی جلد بحالی میں اہم کردار ادا کر سکتی ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں