The news is by your side.

Advertisement

حکومت آلو ٹماٹر کی طرح لیبارٹریز کے لیے بھی ریٹ مقرر کرے: پشاور عدالت

پشاور: ہائی کورٹ کے چیف جسٹس وقار احمد سیٹھ نے لیبارٹریوں کی ٹیسٹ فیس سے متعلق کیس کے دوران کہا کہ حکومت آلو ٹماٹر کی طرح لیبارٹریز کے لیے بھی ریٹ مقرر کرے۔

تفصیلات کے مطابق آج پشاور ہائی کورٹ میں پرائیویٹ لیبارٹریز ٹیسٹ فیس سے متعلق درخواست پر سماعت ہوئی، درخواست گزار کا کہنا تھا کہ پرائیویٹ لیبارٹریاں ڈینگی اور دیگر ٹیسٹس کی زیادہ فیس چارج کر رہی ہیں۔

سیف اللہ محب کاکاخیل ایڈوکیٹ نے عدالت کو بتایا کہ عدالت نے ڈینگی فیس 350 مقرر کی تھی، لیکن نجی لیبارٹریاں زیادہ فیس چارج کر رہی ہیں۔

چیف جسٹس وقار احمد سیٹھ نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ حکومت آلو ٹماٹر کے ریٹ مقرر کرتی ہے، اسی طرح لیبارٹریز کے لیے بھی کوئی ریٹ مقرر کرے، حکومت کو چاہیے متعلقہ لوگوں کے ساتھ بیٹھ کر مناسب ریٹ کا تعین کرے۔

یہ بھی پڑھیں:  بچوں کے بھاری اسکول بیگ سے متعلق قانون سازی کی جائے، پشاور ہائی کورٹ کا حکم

تاہم وکیل نے کہا کہ ہیلتھ کیئر کمیشن کے پاس لیبارٹریز کے لیے ریٹ مقرر کرنے کا اختیار نہیں ہے۔ چیف جسٹس نے استفسار کیا کہ ہیلتھ کیئر کمیشن کے پاس اختیار نہیں تو کس کے پاس ہے اختیار؟

بعد ازاں، پشاور عدالت نے دلائل سننے کے بعد لیبارٹریز فیس کیس پر اپنا فیصلہ محفوظ کر لیا۔

یاد رہے کہ اس سے قبل پشاور عدالت نے کے پی حکومت کو بچوں کے بھاری بستوں سے متعلق بھی قانون سازی کا حکم دیا تھا، اس سلسلے میں عدالت نے حکومت کو چار ماہ کی مہلت دی تھی، عدالت کا کہنا تھا کہ بھاری بستوں سے بچوں کی صحت متاثر ہو رہی ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں