The news is by your side.

Advertisement

مساجد کھولنے کے لیے علما کا کوئی دباؤ نہیں، فیصلہ سوچ سمجھ کر کیا، گورنر سندھ

کراچی: گورنر سندھ عمران اسماعیل کا کہنا ہے کہ مساجد کھولنے کے لیے علما کا کوئی دباؤ نہیں ہے، رمضان المبارک میں نماز اور تراویح کی مشروط اجازت کا فیصلہ سوچ سمجھ کر کیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق گورنر سندھ عمران اسماعیل نے دعوت اسلامی کے مرکز فیضان مدینہ کا دورہ کیا اور لاک ڈاؤن میں مستحقین میں راشن کی تقسیم، امدادی کاموں کا جائزہ لیا۔

گورنر سندھ نے کہا کہ حکومتیں اور غیرسرکاری تنظیمیں لوگوں کی مدد کے لیے سرگرم ہیں، تمام این جی اوز، ڈاکٹر، پیرا میڈیکل اسٹاف کو سلام پیش کرتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ مساجد اور مدارس کی انتظامیہ ایس او پیز پر عمل کرائیں گے، قوم ثابت کرے گی کہ مساجد کی وجہ سے کرونا نہیں پھیلا۔

عمران اسماعیل نے کہا کہ ہمیں پوائنٹ اسکورنگ کی ضرورت نہیں، ہم ایک دوسرے کی چیزوں پر تنقید کرسکتے ہیں، اٹھارویں ترمیم کے بعد صوبے کافی حد تک خود مختار ہیں۔

مزید پڑھیں: رمضان المبارک میں تراویح، نماز جمعہ کے اجتماعات: حکومت اور علماء کرام کے درمیان 20 نکاتی لائحہ عمل پر اتفاق

ایک سوال کے جواب میں گورنر سندھ عمران اسماعیل نے کہا کہ گورنر راج کہاں لگ رہا ہے مجھے تو نہیں پتا۔

واضح رہے کہ دو روز قبل حکومت نے رمضان المبارک میں باجماعت نماز اور تراویح کی مشروط اجازت دی تھی۔

صدر مملکت عارف علوی کا کہنا تھا کہ نمازی وضو گھر سے کر کے مسجد آئیں،مسجد آنے والے صابن سے 20 سیکنڈ ہاتھ دھو کر آئیں،ماسک پہن کر مسجد اور امام بارگاہ آئیں، صف بندی ایسے کی جائے کہ دو نمازیوں کی جگہ خالی رہے، مساجد کے فرش کو کلورین ملے پانی سے دھویا جائے،مسجدوں میں سحری اور افطار کا اجتماعی اہتمام نہ کیاجائے۔

ان کا کہنا تھا کہ سڑکوں، فٹ پاتھوں پر نماز تراویح پڑھنے سے اجتناب کریں صرف مساجد کے احاطے میں نماز تراویح کا اہتمام کیا جائے، نماز سے پہلے اور بعد میں مجمع لگانے سے گریز کیا جائے گا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں