The news is by your side.

Advertisement

بجٹ 19-2018، شوبز انڈسٹری کے لیے پیکج، مستحق فنکاروں کو فنڈ دینے کا اعلان

اسلام آباد: حکومتِ پاکستان نے آئندہ مالی سال کے بجٹ 19-2018 میں فلم انڈسٹری کی بحالی کے لیے بڑے پیکج کا اعلان کردیا جس کے تحت مستحق فنکاروں کو حکومت کی جانب سے فنڈ دیے جائیں گے۔

تفصیلات کے مطابق قومی اسمبلی کے سیشن میں  نومنتخب وفاقی وزیر خزانہ کا بجٹ پیش کرتے ہوئے کہنا تھا کہ ’پاکستان کی فلم انڈسٹری کا شمار سن 1960 کی دہائی میں دنیا کی تیسری بڑی انڈسٹری کے طور پر ہوتا تھا جس کی بحالی کے لیے حکومت پیکج کا اعلان کررہی ہے‘۔

اُن کا کہنا تھا کہ فلم انڈسٹری کے لیے بجٹ پیش کرنے کا مقصد پاکستانی ثقافت کو فروغ دینا اور انڈسٹری کے لیے ترقی کا سازگار ماحول فراہم کرنا ہے جو کو  آئندہ مالی سال کے بجٹ میں خاص طور پر مدنظر رکھا گیا ہے۔

مزید پڑھیں: مالی سال19-2018 کے لیے وفاقی حکومت نے 59.32 کھرب کا بجٹ پیش کردیا

وفاقی وزیر خزانہ کا کہنا تھا کہ ڈرامہ ، فلم سازی اور سینیما گھروں میں استعمال کیے جانے والے آلات کی درآمد پر عائد کسٹم ڈیوٹی کی شرح کم کر کے تین فیصد جبکہ سیلز ٹیکس کو بھی کم کر کے پانچ فیصد کیا جائے گا۔

اُن کا کہنا تھا کہ پاکستان کے مستحق فنکاروں کے لیے فنڈ بھی قائم کیا جائے گا جس کے ذریعے انہیں حکومت کی جانب سے مالی امداد بھی دی جائے گی علاوہ ازیں فلم کے مختلف پروجیکٹس پر سرمایہ کاری کرنے والے افراد یا کمپنیوں کے لیے 5 سال تک انکم ٹیکس دینے کی شرط بھی رکھی گئی جبکہ پاکستان میں بنائی جانے والی غیر ملکی فلموں پر عائد انکم ٹیکس پر 50 فیصد چھوٹ دی جائے گی۔

یہ بھی پڑھیں: بجٹ 19-2018، اے آر وائی بنا عوام کی آواز

مفتاح اسماعیل کا کہنا تھا کہ اس ضمن میں تیار کی جانے والی پالیسی کی مزید تفصیلات وفاقی وزیر مملکت مریم اورنگزیب آئندہ چند ماہ میں پیش کریں گی جس کے بعد صورتحال مزید واضح ہوجائے گی۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں