The news is by your side.

Advertisement

ڈان لیکس: وزیر خزانہ کی طارق فاطمی کو عہدے سے ہٹانے کی تصدیق

واشنگٹن: وزیر خزانہ اسحٰق ڈار نے ڈان لیکس کے معاملے پر طارق فاطمی کو عہدے سے ہٹانے کی تصدیق کردی۔ اسحاق ڈار کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم کو ڈان لیکس کی رپورٹ مل گئی ہے۔

یاد رہے کہ گزشتہ روز وزیر داخلہ چوہدری نثار علی خان نے ڈان لیکس سے متعلق رپورٹ وزیر اعظم کو پیش کردی تھی جس میں طارق فاطمی اور راؤ تحسین کے خلاف کارروائی کی سفارش کی گئی تھی۔

وزیر اعظم نے دونوں کو عہدے سے ہٹانے کی منظوری دے دی تھی۔

مزید پڑھیں: ڈان لیکس پر طارق فاطمی اور راؤ تحسین ذمے دار قرار

دوسری جانب واشنگٹن میں موجود وزیر خزانہ اسحٰق ڈار نے اہم پریس کانفرنس میں کہا کہ ڈان لیکس رپورٹ میں طارق فاطمی کو ہٹانے کی سفارش نہیں کی گئی۔ البتہ ان کے تبادلے پر بات ہو رہی ہے۔

انہوں نے کہا کہ ثابت نہیں ہوا کہ ڈان لیکس کے معاملے میں 3 افراد ملوث ہیں۔ رپورٹ کیسے لیک ہوئی، انکوائری ہونی چاہیئے۔

پاناما لیکس پر ان کا کہنا تھا کہ جے آئی ٹی میں وزارت خزانہ کا کوئی کردار نہیں۔ اسٹیٹ بینک اور ایس ای سی پی با اختیار ہیں۔

ادھر وزیر اعظم کے معاون خصوصی طارق فاطمی نے مستعفی ہونے کی خبروں کی تردید کرتے ہوئے کہا ہے کہ ڈان لیکس سے میرا کوئی تعلق نہیں ہے اس لیے استعفیٰ نہیں دوں گا۔

ذرائع کے مطابق معاون خصوصی طارق فاطمی ڈان لیکس کی رپورٹ پیش کیے جانے سے قبل سارا دن دفتری امور نمٹاتے رہے۔ وہ وزیر اعظم نواز شریف اور چوہدری نثار کے درمیان ہونے والی ملاقات میں بھی موجود تھے اور میٹنگ کے بعد اپنے معمول کے کاموں کی انجام دہی کے لیے اپنے دفتر بھی پہنچے۔

طارق فاطمی کا مؤقف ہے کہ ڈان لیکس کی خبر سے میرا کوئی لینا دینا نہیں ہے اور نہ ہی وزیر اعظم سے ملاقات کے دوران مجھ سے استعفیٰ طلب کیا گیا۔ جب میرا کوئی تعلق ہی نہیں تو استعفیٰ دینے کا بھی کوئی جواز نہیں بنتا۔

یاد رہے کہ ڈان لیکس کے معاملے پر وفاقی وزیر اطلاعات پرویز رشید کو بھی ان کے عہدے سے فارغ کیا جا چکا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں