site
stats
پاکستان

کرپشن کی تحقیقات کے لیے نیا قانون پیش کردیا ہے،اسحاق ڈار

اسلام آباد : وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار نے کہا ہے کہ کرپشن کے خلاف تحقیقات کے لئے نیا قانون قومی اسمبلی میں پیش کر دیا ہے اور نئے قانون کے تحت ملک لوٹنے والوں کا احتساب ہو گا۔

اسلام آباد میں وفاقی وزیر قانون زاہد حامد اور دیگر وزراءکے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ہماری قیادت کا نام پاناما لیکس میں نہیں ہے اپوزیشن سینٹ میں بل پیش نہ کرتی توہم بھی بل نہ لاتے اپوزیشن نے پاناما لیکس کیلئے اپنے ٹی او آر بنائے جب کہ حکومت صرف پاناما لیکس پر نہیں بلکہ قرضوں کی معافی سمیت سب معاملات پر قانون سازی چاہتے ہیں۔

وفاقی وزیر خزانہ اسحاق ڈار کا مزید کہنا تھا کہ حکومت نے اپنے ٹی او آر میڈیا میں پیشن نہیں کیے ،بہتر ہوتا کہ ایک میٹنگ کر کے معاملات حل کر لیے جاتے،اپوزیشن کے مطابلے پر ٹی او آر کمیٹی کا کوئی چیئرمین نہ بن سکا۔

انہوں نے اس تاثر کو غلط قرار دیا کہ حکومت اس بل کے ذریعے کوئی استثنیٰ چاہتی ہے بلکہ نئے قانون کے تحت چار سو افراد کے خلاف بلا امتیاز کارروائی ہو گی، سقوط ڈھاکہ سے ایبٹ آباد واقعے تک تمام کمیشن 1956 کے قانون کے تحت ہی بنے ہیں۔

اس موقع پر وفاقی وزیر نے اعتراف کیا سانحہ کوئٹہ کے بعد اپوزیشن کیساتھ بات آگئے نہ بڑھ سکی تھی تا ہم اب بھی حکومت پوری نیک نیتی کے ساتھ اس معاملے کے حل کے لیے کوشاں ہے۔

پریس کانفرنس میں وفاقی زیر خزانہ کے ہمراہ وفاقی وزیر قانون زاہد حامد بھی موجود تھے انہوں نے نے کہا کہ اپوزیشن کے بل سے ہمارا بل بہتر ہے ، نیا قانون بہتر بنا کر قومی اسمبلی میں پیش کیا ہے۔

بل کی تفصیلات سے آگاہ کرتے ہوئےانہوں نے مزید کہا کہ 2016 کے بل میں 1956 کے ایکٹ کے اختیارات شامل کیے ہیں جبکہ حکومتی بل میں اپوزیشن کی تجاویز کے مطابق تبدیلی بھی کی گئی ہے،انکوائری کمیشن کو غیر ملکی اداروں سے مدد لینے کا اختیار ہوگا جب کہ اس بل میں کمیشن کی ضرورت کے مطابق اور بھی اختیارات تفویض کیے جا سکتے ہیں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top