The news is by your side.

Advertisement

نرس کی بڑی قربانی، بچوں کو شیشے کے پار دیکھنے پر مجبور

مانچسٹر: کرونا وائرس سے لڑنے کے لیے طبی عملہ پوری دنیا میں فرنٹ لائن سپاہی کا کردار ادا کر رہا ہے، برطانوی اسپتال ہڈرز فیلڈ کی ایک نرس بھی اس سلسلے میں بڑی قربانی دے رہی ہے۔

تفصیلات کے مطابق ہڈرز فیلڈ اسپتال میں کام کرنے والی نرس سارہ مور ہائی رسک میں ہونے کے باعث اپنے بچوں کی حفاظت کے لیے اُن سے نہیں مل سکتیں، سارہ مور کھڑکی سے ہی اپنے جگر کے ٹکڑوں سے ملاقات کر پاتی ہیں، کئی دنوں سے نرس اپنے بچوں کو گود میں بھی نہیں لے سکی ہیں۔

سوشل میڈیا پر ماں اور بچوں کی ایسی تصاویر وائرل ہو گئی ہیں، جن میں بچوں اور ماں ایک دوسرے کو شیشے کے آر پار ہی دیکھ سکتے ہیں، ان جذباتی مناظر نے دیکھنے والوں کے دل بھی پگھلا دیے۔ سوشل میڈیا پیغام میں نرس کا کہنا تھا وہ اُس دن کا انتظار نہیں کر پا رہی ہیں جس دن وہ اپنے بچوں کو دوبارہ گود میں لے سکیں گی۔

ہڈرز فیلڈ اسپتال برطانیہ کی نرس اپنے بچوں سے شیشے کے پار ملتے ہوئے

کرونا وائرس کا توڑ، آسٹریلیا میں ڈاکٹرز پر ٹی بی ویکسین کی آزمائش

خیال رہے کہ دنیا بھر میں نہایت مہلک ثابت ہونے والے کرونا وائرس سے جو صورت حال پیدا ہو گئی ہے، اس میں طبی عملہ نہایت جاں فشانی کے ساتھ اپنی جانوں کی پروا نہ کرتے ہوئے انسانیت کی خدمت اور جانیں بچانے میں تن دہی سے مصروف ہے۔

یہی وجہ ہے کہ دنیا کے کئی ممالک میں طبی عملے کو سلام پیش کرنے اور ان کا شکریہ ادا کرنے کا سلسلہ شروع ہو گیا ہے، پاکستان میں بھی ڈاکٹرز اور نرسز کو سلام پیش کیا جا رہا ہے، سندھ حکومت کی جانب سے پولیس اور ٹریفک اہل کاروں کو طبی عملے کو سیلوٹ کرنے کی ہدایت کے بعد دیگر صوبوں میں بھی اس کی پیروی شروع ہو گئی ہے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں