The news is by your side.

Advertisement

قومی ترانے کے خالق حفیظ جالندھری کی برسی

پاکستان کے قومی ترانے کے خالق حفیظ جالندھری 21 دسمبر 1982ء کو وفات پاگئے تھے۔ آج ان کا یومِ وفات ہے۔

حفیظ جالندھری نے غزل اور نظم کے علاوہ اردو ادب کی مختلف اصنافِ سخن کو اپنی تخلیقات سے مالا مال کیا اور خوب نام و مرتبہ حاصل کیا۔ وہ ایک قادر الکلام شاعر تھے جنھوں نے مختلف موضوعات کو اپنی شاعری سمویا۔ انھوں نے بچّوں کے لیے بھی نظمیں تخلیق کیں۔

حفیظ جالندھری 14 جنوری 1900ء کو پنجاب کے مشہور شہر جالندھر میں پیدا ہوئے تھے۔ وہ غزل، نظم اور گیت نگاری کے لیے مشہور ہیں۔ تاہم ان کا سب سے بڑا کارنامہ شاہنامہ اسلام ہے جو چار جلدوں میں شایع ہوا۔ یہ ان کی وہ بامقصد اور اصلاحی تخلیق ہے جس نے انھیں اپنے ہم عصروں میں نمایاں کیا۔ حفیظ جالندھری نے شاہنامہ اسلام لکھ کر اسلامی روایات اور قومی شکوہ کا احیا کیا جس پر انہیں فردوسیِ اسلام کا خطاب دیا گیا۔

حفیظ جالندھری اپنے لکھے ہوئے قومی ترانے کی وجہ سے ہمیشہ یاد رکھے جائیں گے۔

حفیظ جالندھری کے شعری مجموعوں میں نغمہ بار، تلخابہ شیریں اور سوزوساز شامل ہیں۔ ان کے افسانوں کا مجموعہ بھی شایع ہوا جب کہ بچوں کی نظموں پر مشتمل کتاب بھی شایع ہوئی۔

پاکستان کے قومی ترانے کے خالق حفیظ جالندھری نے 21 دسمبر 1982ء کو لاہور میں ہمیشہ کے لیے آنکھیں موند لیں۔ انھیں مینارِ پاکستان کے احاطے میں سپردِ خاک کیا گیا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں