The news is by your side.

Advertisement

صنعتی علاقوں سے گیس کی لوڈ شیڈنگ ختم کی جائے، نعیم الرحمن

کراچی : امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن نے کہا ہے کہ ہم عوام کو حقوق دلانے کے لیے کے الیکٹرک کے خلاف سپریم کورٹ اور نیپرا میں بھی گئے ہیں اور آج صارفین سوئی گیس کی شکایات اور مشکلات کو لے کر ہیڈ آفس ایس ایس جی سی آئے ہیں۔

امیر جماعت اسلامی کراچی حافظ نعیم الرحمن کی سربراہی میں جماعت اسلامی کے وفد کے ہمراہ ایم ڈی سوئی سدرن گیس سے ملاقات کے موقع پر میڈیا سے گفتگو کر رہے تھے انہوں نے مطالبہ کیا کہ صنعتی ایریاز میں اتوار کی گیس لوڈ شیڈنگ ختم کی جائے اور کے الیکٹرک سے صرف شہری ہی نہیں بلکہ ادارے بھی پریشان ہیں جس کے لیے کے الیکٹرک کے خلاف سخت سے سخت کارروائی کی جائے۔

اس موقع پر ایم ڈی سوئی سدرن گیس کمپنی کا کہنا تھا کہ کے-الیکٹرک کو ہمارے 68 ارب روپے دینے ہیں تاہم ابھی تک واجبات ادا نہیں کیے گئے ہیں جس کی وجہ سے ہمارا ادارہ مالی دباؤ کا شکار ہے۔

ایم ڈی سوئی سدرن گیس کمپنی امین راجپوت نے جماعت اسلامی کے وفد کو بتایا کہ کے-الیکٹرک خریدنے والی شنگھائی الیکٹرک کمپنی کو بھی ہم نے اپنے واجبات کی ادائیگی کے حوالے سے خطوط لکھے ہیں تاہم اب تک کوئی جواب موصول نہیں ہوا ہے۔

انہوں نے جماعت اسلامی کے وفد کو بتایا کہ سوئی سدرن گیس اور کے-الیکٹرک کے درمیان صرف 10ملین کیوبک فٹ گیس کی فراہمی کا معاہدہ ہے۔

دورانِ گفتگو جماعت اسلامی کے وفد نے ایم ڈی سوئی گیس کمپنی امین راجپوت کو صارفین کی مشکلات سے آگاہ کرتے ہوئے کہا کہ گیس کے بلوں پر لگنے والے غیر منصفانہ سلیبس کی وجہ سے گیس صارفین پر بھاری مالی بوجھ بڑھ گیا ہے اس پر انتظامیہ کو ایکشن لینا چاہیے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں