حافظ سعید کی نظربندی، لاہور ہائی کورٹ نے حکومت سے جواب طلب کرلیا
The news is by your side.

Advertisement

لاہور ہائیکورٹ: حافظ سعید کی نظربندی پر حکومت سے جواب طلب

لاہور: ہائی کورٹ نے  جماعت الدعوۃ کے امیر حافظ سعید  کی نظربندی کے خلاف  دائر درخواست پر سماعت کے بعد پنجاب حکومت سے 7 مارچ کو جواب طلب کر لیا۔

تفصیلات کے مطابق لاہور ہائی کورٹ میں جماعت الدعوۃ کے امیر کی نظر بندی کے خلاف دائر درخواست کی سماعت جسٹس سردار  شمیم خان کی سبراہی میں دو رکنی بینچ نےکی۔

درخواست گزار کے وکیل  نے عدالت میں مؤقف اختیار کیا  کہ حکومت نے بیرونی  دباؤ میں آکر حافظ سعید کو نظر بند کیا، اُن کی نظر بندی کے احکامات غیر آئینی اور بنیادی حقوق کی خلاف ورزی ہے۔

پڑھیں: ’’ حافظ سعید کی نظر بندی ریاستی پالیسی کا حصہ ہے،آئی ایس پی آر ‘‘

درخواست گزار کے وکیل نے عدالت کو آگاہ کیا کہ  حافظ سعید فلاحی ادارے فلاح انسانیت فاؤنڈیشن کے سربراہ بھی ہیں، یہ تنظیم ملک میں عوام کی خدمت میں مصروف عمل ہے اور حادثات و آفات میں ان کا کردار لائق تحسین ہے۔

مزید پڑھیں: ’’ حافظ سعید نظر بند، گھر سب جیل قرار، جماعت الدعوۃ و ایف آئی ایف واچ لسٹ‌ میں‌ شامل ‘‘

وکیل نے مزید مؤقف اختیار کیا کہ حافظ سعید پر آج تک ملک میں انتشار یا بدامنی پھیلانے کا الزام تک نہیں لگایا گیا  لہذا عدالت حافظ سعید کی نظر بندی کو کالعدم قرار دے، عدالت نے درخواست پر کاروائی کرتے ہوئے پنجاب  حکومت سے 7 مارچ کو جواب طلب کر لیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں