The news is by your side.

Advertisement

ہے دعا یاد مگر حرفِ دعا یاد نہیں​

ہے دعا یاد مگر حرفِ دعا یاد نہیں​
میرے نغمات کو اندازِ نوا یاد نہیں​

ہم نے جن کے لئے راہوں میں بچھایا تھا لہو​
ہم سے کہتے ہیں وہی عہدِ وفا یاد نہیں​

زندگی جبرِ مسلسل کی طرح کاٹی ہے​
جانے کس جرم کی پائی ہے سزا، یاد نہیں​

میں نے پلکوں سے درِ یار پہ دستک دی ہے​
میں وہ سائل ہوں جسے کوئی صدا یاد نہیں​

کیسے بھر آئیں سرِ شام کسی کی آنکھیں​
کیسے تھرائی چراغوں کی ضیاءیاد نہیں​

صرف دھندلائے ستاروں کی چمک دیکھی ہے​
کب ہوا، کون ہوا، مجھ سے خفا یاد نہیں​

آﺅ اک سجدہ کریں عالمِ مدہوشی میں​
لوگ کہتے ہیں کہ ساغر کو خدا یاد نہیں​

**********

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں