The news is by your side.

Advertisement

بالوں کو کلر کرتے ہوئے ان باتوں کا خیال لازمی رکھیں

بہت کم لوگ ایسے ہوتے ہیں جو اپنے بالوں میں سفیدی کو کھلے دل سے قبول کرتے ہیں اس کے برعکس 75 سے 80 فیصد لوگ بالوں کی سفیدی چھپانے کے لیے مخصوص رنگ کا استعمال کرتے ہیں۔

اس کے علاوہ خواتین میں آج کل فیشن کے لیے بھی بالوں کو رنگوانا عام سی بات ہوگئی ہے اور ایسا ایک یا دو بار نہیں بلکہ متعدد بار کیا جاتا ہے جو بالوں کی صحت کیلئے اچھی مثال نہیں یعنی بال کلر کروانا اب بہت آسان ہوگیا ہے۔

ہیئر کلرنگ ایک نازک مرحلہ ہے جس کے لیے اس کے بارے میں علم اور تجربے کی ضرورت ہوتی ہے۔ العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق بالوں کے رنگنے کے لیے پیشہ ور افراد کے مشورے کی ضرورت ہوتی ہے۔بالوں کے رنگ میں کوئی تبدیلی کرتے وقت نیچے درج کی گئی ان 10 غلطیوں سے بچا جا سکتا ہے۔

ہیئر سیلون میں نہ جانا

اس میدان میں ماہرین کی مہارت کا استعمال بالوں کا صحیح رنگ منتخب کرنے اور مطلوبہ نتیجہ حاصل کرنے کی ضمانت دیتا ہے۔ اس فیلڈ کے ماہرین بالوں کے رنگ کا تعین کرنے میں مدد کرتے ہیں جو جلد کے رنگ سے ملتے ہیں۔

وہ متوقع نتیجہ حاصل کرنے کی ضمانت دیتے ہیں، اس کے ساتھ بالوں کی دیکھ بھال کا طریقہ کار بھی بتاتے ہیں جس کے بعد بالوں کی رنگت میں استحکام رہتا ہے۔

بالوں کے ماہرین پر اندھا اعتماد

بالوں کا رنگ منتخب کرنے میں ذاتی رائے کلیدی کردار ادا کرتا ہے۔ لہذا آپ کو اپنے بالوں کا رنگ منتخب کرنے کے بارے میں اپنی رائے رکھنی چاہیے۔ جہاں تک ہیئر ڈریسنگ کے شعبے میں ماہرین کے کردار کا تعلق ہے، اس کا انحصار بالوں کے مناسب رنگ کا انتخاب کرنے اور اسے صحیح طریقے سے نافذ کرنے کے لیے مشورے فراہم کرنے پر ہے۔

بالوں کا گہرا رنگ منتخب کرنا

بالوں کے بہت گہرے رنگ کو اپنانے سے چہرے کی چمک مدھم ہو جاتی ہیں جبکہ ہلکے رنگ اسے روشن کرتے ہیں۔ جہاں تک اس قاعدے کی پیروی کی جانی چاہیے۔ ایسا بالوں کا رنگ منتخب نہیں کرنا چاہیے جو آئی برو کے رنگ سے زیادہ گہرا ہے۔

گہرا رنگ منتخب کرنا

بالوں کے رنگ کو مستقل تبدیل کرنا ایک خطرہ ہے جو مطلوبہ نتائج حاصل نہیں کر سکتا ہے۔ اس لیے مستقل رنگنے کے مرحلے پر جانے سے پہلے عارضی بالوں کا رنگ اپنایا جائے۔

گھر میں بالوں کا رنگ ہلکا کرنا

بالوں کا رنگ ہلکا کرنا ایک انتہائی نازک مرحلہ ہے اس کے لیے ماہرین کی مہارت کی ضرورت ہے۔ گھر پر لگانے سے بہت زیادہ خطرہ ہوتا ہے۔ خاص طور پر اگر بالوں کا رنگ دو ڈگری سے زیادہ ہلکا ہو جائے تو نقصان کا باعث بن سکتا ہے۔

جلد کے رنگ اور آنکھوں کے ساتھ بالوں کے رنگ کا میچ نہ ہونا

بالوں کا قدرتی رنگ عام طور پر جلد اور آنکھوں کے رنگ جیسا ہوتا ہے۔ اس لیے کسی قسم کی تبدیلی مسئلے کا باعث بنتی ہے اور نتائج کی ضمانت نہیں دی جاتی۔

بالوں کے رنگ کا ناقص انتخاب جلد کو پھیکا یا بے جان بنا سکتا ہےجبکہ آنکھوں کو تھکا ہوا اور چمک سے خالی بنا سکتا ہے۔ اس سلسلے میں عام اصول یہ ہے کہ ہلکی جلد ہلکے رنگ کے بالوں کے ساتھ مطابقت رکھتی ہے اور سیاہ جلد سیاہ بالوں کے ساتھ مطابقت رکھتی ہے۔

دوسرا رنگ چھپانے کے لیے بالوں کا نیا رنگ منتخب کریں

متوقع رنگ حاصل کرنے میں ناکامی کی صورت میں ماہرین مشورہ دیتے ہیں کہ اس کے اوپر کوئی اور رنگ نہ لگائیں۔ بلکہ بالوں کے لیے ہلکا پھلکا شیمپو اپنائیں جس سے مختصر عرصے میں نتائج بہتر ہوں گے۔ ہیئر ڈریسنگ کے شعبے کے ماہرین سے بھی مشورہ لیا جا سکتا ہے کہ وہ غلطی کو درست کریں جو کہ رنگنے کے دوران کی گئی ہے۔

عارضی رنگ تبدیل کرنے کے لیے نئے رنگ کا انتخاب کرنا

عارضی بالوں کا رنگ منتخب کرنے کا مطلب یہ ہے کہ یہ مستقل نہیں رہے گا اور یہ بالوں کے بار بار دھونے سے غائب ہو جاتا ہے لہذا اسے مستقل رنگ میں چھپانے کی ضرورت ہے۔

مہندی کا سہارا لینا

مہندی کو قدرتی اجزا میں سے ایک سمجھا جاتا ہے جو بالوں کا رنگ بدلنے میں مدد کرتا ہے لیکن اس فیلڈ میں تجربے کی کمی کی صورت میں اس کا اطلاق پیچیدہ ہے اور اس کی درخواست میں آسانی کی وجہ سے اسے نیم مستقل رنگنے کے ساتھ تبدیل کرنے کا مشورہ دیا جاتا ہے۔ اس میدان میں ماہرین کی مہارت سے فائدہ اٹھانے کے لیے ہیئر ڈریسنگ سیلون میں مہندی لگائی جا سکتی ہے۔

بالوں پر رنگ لگاتے وقت ان کی حالت کو نظر انداز کریں

خراب اور بے جان بالوں کو رنگنا ایک مشکل کام ہے۔ چاہے وہ عارضی ہو یا مستقل۔ اس معاملے میں سب سے اچھی بات یہ ہے کہ بالوں کو رنگنے سے پہلے ان کی حالت کو بہتر بنایا جائے اور یہ کام ہیئر ڈریسنگ سیلون کے ماہرین کو تفویض کیا جائے خاص طور پر رنگے ہوئے بالوں کی صورت میں جو رنگ میں نئی ​​تبدیلی لاتے ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں