حج کو کاروبار بنا رکھا ہے،اسلام آباد ہائی کورٹ حکومت پر برہم -
The news is by your side.

Advertisement

حج کو کاروبار بنا رکھا ہے،اسلام آباد ہائی کورٹ حکومت پر برہم

اسلام آباد : حج کرپشن کیس میں اسلام آباد ہائی کورٹ نے اپنے ریمارکس میں حکومت پر برہمی کا اظہارکرتے ہوئے کہا ہے کہ حج کو کاروبار بنا رکھا ہے۔

اسلام آباد ہائی کورٹ میں حج کرپشن کیس کی سماعت چیف جسٹس محمد انور خان کاسی ے کی، سماعت کے دوران چیف جسٹس محمد انورخان کاسی نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ حاجیوں کو دی گئی رہائش نامناسب تھی، باتھ روم تھانہ اس کی چھت، ان غیر معیاری حالات کو سعودی حکومت نے بھی محسوس کیا اور معاوضہ کی رقم بھی دی گئی۔

چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ بھارت اور دیگر ممالک کے حجاج کے لئے اعلٰی انتظامات کیے جاتے ہیں لیکن ہم نے حج کو کاروبار بنایا ہوا ہے، استغفار کریں کہیں اللہ کی پکڑ میں نہ آجائیں۔

عدالت نے وزارت مذہبی امور کے سابق جوائنٹ سیکریٹری آفتاب الاسلام کی سزا کی معطلی کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کرلیا، راؤ شکیل کی درخواست وکیل کی عدم حاضری کے باعث مزید کاروائی کے بغیر گرمیوں کی چھٹیوں کے بعد تک ملتوی کردی گئی۔


 

مزید پڑھیں : حج کرپشن کیس: سابق وزیر مذہبی امورحامد سعید کاظمی کو16 سال قید کی سزا


 

واضح رہے حج اسکینڈل دو ہزار دس میں سامنے آیا تھا، جس میں حج انتظامات میں بد عنوانی اور بدنظمی کے نتیجے میں پاکستانی حاجیوں کو پیش آنے والی مشکلات پر سپریم کورٹ نے از خود نوٹس لیا تھا۔

سابق وزیر برائے مذہبی امور حامد سعید کاظمی اور وزارت مذہبی امور کے سابق ایڈیشنل سیکریٹری آفتاب احمد پر 2010 کے حج سیزن کے دوران قومی خزانے کو اربوں روپے نقصان پہنچانے کا الزام عائد تھا، اس اسکینڈل کے سامنے آنے کے بعد حامد سعید کاظمی کو وزارت مذہبی امور سے ہاتھ دھونا پڑے تھے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں