حلیم ۔۔ مذہبی ، ثقافتی اور سیاسی پکوان -
The news is by your side.

Advertisement

حلیم ۔۔ مذہبی ، ثقافتی اور سیاسی پکوان

آخر برصغیر میں آیا کہاں سے

حلیم پاک ہند کے ان چند پکوانوں میں سےایک ہے جو یہاں کے لوگ بہت رغبت سے کھاتے ہیں۔ اس کا حوالہ تہذیبی ہونے کے ساتھ ساتھ مذہبی بھی ہے۔ حلیم عربی زبان کا لفظ ہے جس کے معانی ’نرم‘ کے بھی ہوتے ہیں۔

اردو کے مشہور شاعر اور مزاح نگار ابن انشا مرحوم نے تو صدر کراچی کے معروف حلیم فروش ’گھسیٹے خان‘ پر حاشیے ( کالمز) بھی لکھے۔ عرب اور وسط ایشیا کے حملہ وروں اور تجار نے حلیم کو برصغیر میں متعارف کروایا۔ عربی معاشرے میں اس کو ’ہریسہ‘ اور کچھ لوگ ’ہریس‘ کہتے ہیں۔ انتولیہ ایران میں اس کو ’ڈشک‘ شمالی عراق میں اس کو “کس کس” کہا جاتا ہے۔ بوزنیا میں بھی حلیم کے شکل کی ڈش بنائی جاتی ہے جس کا رنگ سفید ہوتا ہے۔

عرب ممالک میں بنایا جانے والا ہریسہ، جو حلیم کی ابتدائی شکل ہے

 حلیم پاکستان اور ہندوستان کا ثقافتی اور مذہبی پکوان ہے۔جو رمضان شریف اور محرم الحرام میں خوب کھایا جاتا ہے۔ محرم کی نویں شب کو ہندوستاں اور پاکستان کے مسلمان امام حسینؓ کی نیاز کے طور پر حلیم پکاتے ہیں۔ خاص کر پاک و ہند کے چند بڑے شہروں میں نوجوان رات بھر دیگوں میں بڑے پیمانے پر حلیم بناتے نظر آتے ہیں۔ یہ حلیم لکڑیوں پر پکایا جاتا ہے۔ بنگلہ دیش میں حلیم پر بہار رمضانوں میں آتی ہے۔ پاک و ہند میں ’کھچڑا‘ بڑے شوق سے کھایا جاتا ہے۔ یہ حلیم کی ہی ایک شکل ہے۔ جس میں گوشت کا مصالحہ دار قورمہ تیار کرکے الگ سے ابلے ہوئےدلیہ اناج، گیہوں میں ملا دیا جاتا ہے۔ اور آگ کی ہلکی آنچ میں پکایا جاتا ہے۔ حلیم کی ایک اور شکل ’حیدرآبادی حلیم‘ بھی ہے۔ جو مغلوں کے زمانے میں یمنی عرب، ایرانی، اور افغانی باشندوں نے حیدرآباد دکن میں متعارف کروایا۔

حیدرآباد میں حلیم ’پوٹلے‘ کے گوشت اور اصلی گھی سے تیار کیا جاتا ہے۔اس حلیم میں یہ اجزا شامل ہوتے ہیں۔ مسور کی دال، ماش کی دال،چنے کی دال، جو،چاول، گہیوں/ اناج ،گھی/ تیل ،پسا ہوا گرم مصالحہ پسا ہوا سیاہ زیرہ، پسی ہوئی ہلدی،بادیان کے پھول،تلہاری مرچ، گائے، مرغی یا مٹن کا گوشت (معہ یخنی) ، پسا ھو لہسن،پسی ہوئی ادرک، کٹے ہوئے بادام اور اخروٹ، لیموں کے کترےہوئے چھلکے، تیز پات، بڑی سیاہ الائچی، املی یا لیموں کا رس یا دھی بھی استعمال کیا جاسکتا ہے۔ حلیم تیار ہونے کے بعد اس پر پودینے کے پتے،سبز دھنیا، لیمو کا رس، تلے ہوئے پیاز اور کتری ہوئی ادراک ڈال کر پیش کیا جاتا ہے۔ اس پر گھی یا تیل کا تڑکا/ بھگار بھی لگایا جاتا ہے اور اس کر مزید چٹ پٹا بنانے کے لیے حلیم پر گرم مصالحہ بھی ڈالا جاتا ہے۔

حلیم میں’فائبر‘ ہوتا ہے اور ہضم بھی قدرے جلد ہوجاتا ہے۔سبزی خوروں کے لیے بغیر گوشت کا حلیم بھی تیار کیا جاتا ہے جس کو ’لزیزہ‘ کہا جاتا ہے۔

کچھ بڑے شہروں میں ٹھیلوں پربھی حلیم فروخت ہوتا ہے۔ کراچی میں اسلم روڈ اور جٹ لائنز پرپہلے سے تیار شدہ حلیم کی ڈیگیں ملتی ہیں جو نیاز اور فاتحہ کے لیے اور ٹھیلوں پر حلیم فروخت کرنے والوں کو آسانی سے میسر ہوتی ہے۔آج کل غلط کاروباری انداز بھی دیکھنے میں مل رہا ہے۔ کچھ دن قبل حلیم کے ریسٹورنٹس پر پولیس نے ایسی حلیم کی دیگیں اپنے تحویل میں لے لیں جن میں پٹسن کی بوریوں کے ریشے اورباریک دھاگوں کی آمیزش کی گی تھی۔ یہ لوگ حلیم میں’ڈیکری‘ بھی استعمال کرتے ہیں۔

محرم میں حلیم بنایا جارہا ہے

اب تو کراچی میں حلیم نے سیاسی رنگ بھی اختیار کرلیا ہے۔ کچھ سیاست دان اپنی سیاسی ملاقاتوں اور صحافیوں کے ساتھ پریس کانفرسوں میں ’حلیم‘ تیار کرواتے ہیں۔ یورپ، مشرق وسطی، عرب امارات، امریکہ اورکینڈا کے دیسی ریسٹورنیس میں بھی حلیم ذوق و شوق سے کھایا اور کھلایا جاتا ہے۔ مغربی ممالک میں حلیم بند ڈبوں میں بھی ملتا ہے۔ بازار میں حلیم تیاری کرنے کے لیے تیار شدہ مصالحہ جات مل جاتے ہیں۔


احمد سہیل

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں