The news is by your side.

Advertisement

فلسطینی وزیراعظم پرقاتلانہ حملےکی کوشش فلسطینی انٹیلیجنس نےکی‘ حماس

یروشلم: غزہ میں اپنا اسرورسوخ رکھنے والی تنظیم حماس نے یہ دعویٰ کیا ہے کہ فلسطینی وزیر اعظم پر قاتلانہ حملے کی کوشش فلسطینی انٹیلیجنس نے کی تھی۔

تفصیلات کے مطابق گذشتہ دنوں فلسطینی وزیر اعظم ’رامی حمد اللہ‘ کو دھماکے کے ذریعے ہلاک کرنے کی کوشش کی گئی تھی تاہم وہ اس قاتلانہ حملے میں بال بال بچے تھے بعد ازاں حملے کی ذمہ داری حماس پر عائد کی گئی تھی تاہم اب حماس نے یہ دعویٰ کیا ہے اس کارروائی میں فلسطینی انٹیلیجنس خود ملوث ہے۔

حماس کی جانب سے جاری کردہ بیان میں کہا گیا ہے کہ فلسطینی انٹیلیجنس نے وزیر اعظم پر حملے کے لیے ایک شدت پسند تنظیم کا سہارا لیا اور اسی کے ذریعے باقاعدہ منصوبہ بندی کے بعد حملہ کرایا گیا۔

غزہ : اسرائیلی فورسزکی فائرنگ‘ 4 فلسطینی شہید‘ 955 زخمی

حماس کے مطابق تحقیقات سے ثابت ہو چکا ہے کہ دھماکے کی کارروائی میں ایک شدت پسند جماعت ملوث ہے، اس کے سربراہ کا نام احمد فوزی سعيد صوافطہ ہے جبکہ ان کے گہرے تعلقات فلسطینی انٹیلیجنس سے ہیں۔

تنظیم حماس کا کہنا تھا کہ اس شدت پسند جماعت کو انٹیلیجنس ادارے کی جانب سے پشت پناہی حاصل ہے، یہ جماعت غزہ اور سیناء میں دہشت گرد حملوں کی ذمّے دار ہے جبکہ یہ تنظیم غزہ کا دورہ کرنے والی بین الاقوامی شخصیات، مصری سکیورٹی وفد اور حماس تنظیم کے اہم رہنماؤں کو نشانہ بنانے کی منصوبہ بندی بھی کر چکی ہے۔

ملائیشیا میں فلسطینی پروفیسر کا قتل، اسرائیل نے الزامات کی تردید کر دی

خیال رہے کہ فلسطینی حکومت نےاپنے ایک بیان میں حماس کے اس موقف کی مذمت کرتے ہوئے اسے ایک بار پھر قاتلانہ حملے کا ذمے دار ٹھہرایا ہے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں