The news is by your side.

Advertisement

لاہور ہائی کورٹ : نیب نے حمزہ شہباز کے آمدن سے زائد اثاثوں کی تفصیلات جمع کرادیں

لاہور : نیب نے حمزہ شہباز سے متعلق جوابات عدالت میں جمع کرادیئے، رمضان شوگر مل، صاف پانی اور منی لانڈرنگ کیسز سے متعلق جوابات اور آمدن سے زائد اثاثوں کی تفصیلات شامل ہیں۔

تفصیلات کے مطابق قومی احتساب بیورو لاہور نے لاہور ہائیکورٹ میں حمزہ شہباز سے متعلق تمام جوابات جمع کرادیئے، اس کے علاوہ حمزہ شہباز کے آمدن سے زائد اثاثوں کی تفصیلات بھی جمع کرادی گئیں، اے آر وائی نیوز نےحمزہ شہباز سے متعلق جوابات کی کاپی حاصل کرلی۔

نیب پراسیکیوٹر کے مطابق حمزہ شہباز نے بغیر کسی عہدے کے صاف پانی کمپنی اجلاس کی صدارت کی حمزہ کی موجودگی سے ٹھیکوں پر اثر انداز ہونے کےشواہد ملے، حمزہ شہباز نے اختیارات سے تجاوز کرتے ہوئے رمضان شوگر ملز کو فائدہ پہنچانے کے لئے نالہ تعمیر کرایا گیا۔

جواب میں کہا گیا ہے کہ حمزہ شہباز کےاکاؤنٹ میں2005سے2008تک 18کروڑ روپےآئے، حمزہ شہباز کےاکاؤنٹ میں رقم بیرون ملک سےمنتقل ہوئی، حمزہ شہباز 18کروڑ روپے کا جواب نہیں دے سکے۔

نیب پراسیکیوٹر کے مطابق نیب نے یورپین ایشین ٹریڈنگ کارپوریشن کی تفصیلات بھی جمع کرائیں، یورپین ایشین ٹریڈنگ میں سلمان شہباز، ربیعہ عمران شیئرز ہولڈرز ہیں، میاں ٹریڈنگ پرائیویٹ میں حمزہ شہباز ودیگرکے شیئر کی تفصیلات جمع کرائیں، میاں ٹریڈنگ میں حمزہ،سلمان شہباز،نصرت شہباز، طارق دستگیر، عابد رسول شیئرز ہولڈرز ہیں۔

اس کے علاوہ شریف فرید ملز میں حمزہ شہباز سمیت دیگر کے اثاثوں کی مکمل رپورٹ بھی جمع کرائی گئی ہے، شریف فرید ملز میں حمزہ شہباز، سلمان شہباز، طارق دستگیر، عابد رسول بھی شیئر ہولڈرز ہیں۔

نیب پراسیکیوٹر کے مطابق رمضان انرجی لمیٹڈ میں بھی حمزہ شہباز کےحصص کی تفصیلات پر جواب جمع کرایا ہے، رمضان انرجی لمیٹڈ میں حمزہ شہباز، سلمان شہباز، نصرت شہباز، طارق دستگیر بھی شیئرہولڈر ہیں، علاوہ ازیں نوبل انرجی لمیٹڈ اور شریف فرید ملزبھی رمضان انرجی لمیٹڈ میں شیئرزہولڈرز ہیں۔

نیب رپورٹ کے مطابق شہباز شریف اور ان کے بچوں کے اثاثوں کی1999میں مالیت50ملین تھی، حمزہ شہبازنے2001 میں22ملین کے اثاثے ظاہر کئے،2001میں ظاہر کئے گئے اثاثے2017 میں411ملین ہوگئے، حمزہ شہباز کے388ملین روپےکے اثاثے جائز ثابت نہیں کرسکے، حمزہ شہباز نے18کروڑبیرون ملک سےآمدن ظاہرکی جوجعلی ثابت ہوئی۔

نیب پراسیکیوٹر کا مزید کہنا ہے کہ شہباز شریف فیملی کو وراثت میں صرف رمضان شوگر مل ملی، حمزہ شہباز نے سلمان شہباز اور والدہ نصرت شہباز کے ساتھ مل کر11فیکٹریاں لگائیں، شہباز فیملی کے اثاثے 2008میں683ملین ہوگئے جو ذرائع سے کہیں زیادہ ہیں۔

شہباز فیملی کے2017میں اثاثے3.3 ارب ہوگئے جن کے ذرائع معلوم نہیں، حمزہ شہباز کے اثاثےاور فیکٹریاں ان کےذرائع آمدن سے زیادہ ہیں، حمزہ شہباز نے ان ذرائع کو چھپانے کے لیے منی لانڈرنگ کی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں