The news is by your side.

Advertisement

احتساب عدالت نے حمزہ شہباز کے جسمانی ریمانڈ میں 7دن کی توسیع کر‌دی

لاہور : احتساب عدالت نے آمدن سے زائداثاثہ جات کیس میں اپوزیشن لیڈر پنجاب اسمبلی حمزہ شہباز کے جسمانی ریمانڈ میں 7دن کی توسیع کر دی اور 10 اگست کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق احتساب عدالت میں اپوزیشن لیڈر پنجاب اسمبلی حمزہ شہباز کیخلاف آمدن سے زائداثاثہ جات کیس کی سماعت ہوئی ، نیب نے حمزہ شہباز کو جسمانی ریمانڈ مکمل ہونے پر عدالت میں پیش کیا۔

حمزہ شہباز کے وکیل امجدپرویز اور نیب پراسیکیوٹروارث جنجوعہ بھی عدالت میں پیش ہوئے۔

حمزہ شہباز کی پیشی کے موقع پر سکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے جبکہ احتسا ب عدالت کے اطراف راستوں کو خارداد تاریں اور کنٹینرز لگا کر بند کردیاگیا۔

سماعت میں نیب نے حمزہ شہباز کےجسمانی ریمانڈ میں 15 دن کی توسیع کی استدعا کی ، وکیل نیب نے بتایا بے نامی کمپنیوں کے ذریعے جائیداد خریدی گئی  جس پر عدالت نے استفسار کیا کیاجعلی ٹی ٹیز کے حوالے سے تفتیش مکمل ہو گئی۔

وکیل نیب کا کہنا تھا کہ جعلی ٹی ٹیز کے ذریعےحمزہ شہباز کے اہلخانہ نے جائیدادیں خریدیں، ڈھائی کروڑکی رقم حمزہ شہباز کے اکاؤنٹ میں منتقل کی گئی، بعد ازاں کاروبار میں نقصان کےباعث کام بند کر دیا گیا،  اراضی بعد میں رمضان شوگر مل نے خرید لی، اراضی کے تحقیقات کی جا رہی ہے کہ کتنی اور کس کی ملکیت ہے۔

وکیل حمزہ شہباز نے کہا نیب حکام عدالت میں غلط بیانی سے کام لے رہےہیں ، عدالت مزید جسمانی ریمانڈ نہ دے ۔

دلائل کے بعد احتساب عدالت نےحمزہ شہباز کے جسمانی ریمانڈ کی درخواست پر فیصلہ محفوظ کیا اور بعد میں محفوظ فیصلہ سناتے ہوئے حمزہ شہباز کے جسمانی ریمانڈ میں 7دن کی توسیع کر‌دی اور 10 اگست کو دوبارہ پیش کرنے کا حکم دیا۔

آمدن سے زائداثاثہ جات کیس کی سماعت میں حمزہ شہباز شریف کوکمرہ عدالت میں دیکھ کر شہری آپے سے باہر ہو گیا اور حمزہ شہباز شریف کو بھری عدالت میں چوراور لٹیراکہہ ڈالا، شہری کا کہنا تھا کہدونوں باپ بیٹا ملک لوٹ کرکھاگئے،ملک کے حالات دیکھ کر دل خون کے آنسو روتا ہے۔

بعد ازاں پولیس نے شہری کو کمرہ عدالت سے نکال دیا۔

مزید پڑھیں :  آمدن سے زائداثاثہ جات کیس : حمزہ شہباز کے جسمانی ریمانڈ میں 3اگست تک توسیع

یاد رہے گذشتہ سماعت میں وکیل نیب نے کہا 2 کروڑ کے 2004 سے ٹیکس ریٹرن نہیں ملے اور 2 بے نامی کمپنیاں بھی سامنے آئی ہیں، کمپنیوں کی 5 ارب روپے کی ٹرانزکشز ہوئی ہیں، ڈائریکٹر کو طلب کیا تو ریکارڈ دینے کا وعدہ کیا لیکن کچھ نہیں دیا۔

واضح رہے نیب نے لاہور ہائی کورٹ کی عبوری ضمانت میں توسیع مسترد ہونے کے بعد حمزہ شہباز کو گرفتار کیا تھا ،حمزہ شہبازپرمنی لانڈرنگ اور غیر قانونی اثاثےبنانے کے الزامات ہیں۔

نیب نے حمزہ شہباز کی گرفتاری کی وجوہ بھی جاری کیں تھیں، نیب نے کہا تھا 2003 میں حمزہ شہباز کے اثاثے 18 ملین تھے اور 2017 تک اثاثے 411.630 ملین ہوگئے، جب کہ ملزم نے 181 ملین روپے باہر سے آمدن کا دعویٰ کیا تھا۔

خیال رہے منی لانڈرنگ اورآمدن سےزائد اثاثوں پر شریف فیملی کےخلاف مختلف زاویوں سےتحقیقات جاری ہے ، الزامات کے مطابق شریف فیملی کے انیس سو ننانوے میں اثاثہ جات پانچ کروڑچھتیس لاکھ تھے،اب ان کی دولت سواتین ارب کیسے ہوگئی؟

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں