کراچی میں کھلے آئل اور گھی کے خلاف کارروائی، دس سے زائد ہول سیل دکانیں سربمہر -
The news is by your side.

Advertisement

کراچی میں کھلے آئل اور گھی کے خلاف کارروائی، دس سے زائد ہول سیل دکانیں سربمہر

کراچی : سندھ فوڈ اتھارٹی نے کراچی میں واٹر پمپ اور گول مارکیٹ میں مضر صحت کھلے آئل اور گھی کے خلاف بڑا کریک ڈاؤن کرتے ہوئے دس سے زائد ہول سیل کی دکانیں سیل کردی ہیں۔

تفصیلات کے مطابق سندھ فوڈ اتھارٹی نے5ستمبر کو سائنٹفک کمیٹی کی سفارش پر نوٹیفکیشن جاری کردیا تھا جس میں جس میں واضح طور پر کہا گیا تھا کہ کھلے آئل اور گھی پر مکمل پابندی عائد کردی گئی ہے۔

اس کے علاوہ سندھ فوڈ اتھارٹی نے اس حوالے سے دکانداروں کو خط لکھ کر بھی آگاہ کردیا تھا لیکن وہاں سے کوئی خاطرخوا جواب موصول نہ ہوا، اس کے باوجود شہر بھر میں بڑے پیمانے پر کھلے آئل اور گھی کی فروخت کا کاروبار جاری تھا۔

سپریم کورٹ کے احکامات پر سندھ فوڈ اتھارٹی نے کراچی کے علاقے ایف بی ایریا اور ناظم آباد میں کارروائی کی اس دوران دس سے زائد ہول سیل کی دکانیں سیل کی گئیں جن میں لاکھوں ٹن آئل موجود تھا۔

 سندھ فوڈ اتھارٹی نے یوسف پلازہ، واٹر پمپ اور گول مارکیٹ میں دس بڑی ہول سیل دکانوں کو سیل کردیا، سندھ فوڈ اتھارٹی نے بتایا کہ یہ بڑے ہول سیلر شہر بھر میں بڑے پیمانے پر کاروبار کرتے تھے اس کے علاوہ چھاپے کے دوران یہ دیکھا گیا کہ معروف برانڈز کے خالی ڈبے میں بھی یہی تیل بھرا کرتے ہیں،

سندھ فوڈ اتھارٹی نے تمام ہول سیلر کے خلاف مقدمہ درج کرا دیا اور واقعے سے نمونے لے کر لیبارٹری بھیج دیئے ہیں۔ سندھ فوڈ اتھارٹی کا کہنا ہے کے کھلا آئل اور گھی حفظان صحت کے اصولوں کے بالکل منافی ہے اس کی نہ تو کوئی کوالٹی کنٹرولنگ ہوتی ہے نہ تیاری میں کوئی سٹینڈرڈ فالو کیا جاتا ہے۔

اس کے علاوہ وٹامن اے اینڈ ڈی بھی شامل نہیں کیا جاتا اور مارکیٹ میں فروخت کرنے سے پہلے اس کا کوئی ٹیسٹ نہیں ہوتا، مضر صحت ہونے کی وجہ سے عوام امراض قلب، کولیسٹرول کی زیادتی اور کینسر جیسی بیماریوں میں مبتلا ہو رہے ہیں۔

اس حوالے سے اے آر وائی نیوز کے پروگرام ذمہ دار کون کے اینکر کامل عارف نے خصوصی پروگرام کیا اور گھروں میں تیار ہونے والے مضر صحت تیل اور گھی سے متعلق حقیقت کو بے نقاب کیا یہ پروگرام جلد آن ایئر کیا جائے گا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں