The news is by your side.

Advertisement

ہمیں کسی نے دھمکیاں نہیں دیں، اہلیہ حسن علی

آئی سی سی ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کے دوسرے سیمی فائنل میں حسن علی کے کیچ چھوٹ جانے پر شائقین کی جانب سے مختلف ردعمل کا اظہار کیا جارہا ہے۔

ایک طرف ان پر تنقید کی جارہی ہے تو دوسری جانب شائقین کرکٹ کی بڑی تعداد انہیں گزشتہ ٹی ٹوینٹی کا ہیرو قرار دیتے ہوئے خراج تحسین بھی پیش کررہی ہے۔

آئی سی سی مینز ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ کا سیمی فائنل ہارنے کے بعدسوشل میڈیا پر حسن علی کو پرفارمنس کی بنیادپر تنقید کا نشانہ بنایا گیا اور سوشل میڈیا صارفین نے انہیں میتھیو ویڈ کا کیچ ڈراپ کر نے پر ہار کا ذمہ دار قرار دیا۔

اس سلسلے میں قومی کرکٹر حسن علی کی اہلیہ سامعہ آرزو نے پاکستان سے ملنے والی دھمکیوں کی خبروں کی  سختی تردید کردی ہے۔

سامعہ آرزو نے اپنے انسٹاگرام اکاونٹ کے اسٹیٹس پر اس ٹوئٹر اکاونٹ کی تصویر لگا کر لکھا ہے کہ اس کاونٹ نے بہت سے جعلی ٹویٹس گردش کر رہی ہیں, مجھے، حسن علی اور بیٹی کو پاکستان سے کوئی دھمکی نہیں ملی بلکہ لوگوں کی جانب سے ہمیں سپورٹ کیا جار ہا ہے ۔

انہوں نے اس ٹوئٹر اکاونٹ کو بلاک کرنے درخواست کرتے ہوئے یہ بھی بتایا ہے کہ ان کا ٹوئٹر پر کوئی اکاونٹ ہی نہیں ہے۔

قبل ازیں اس حوالے سے افواہوں کا بازار بھی گرم تھا، سوشل میڈیا صارفین کی جانب سے حسن علی پر تنقیدکے بعد حسن علی کی اہلیہ کے نام پر ایک جعلی ٹوئٹر اکاونٹ سے کچھ ٹویٹس کی گئیں جو وائرل ہوگئیں۔

مذکورہ جعلی ٹویٹس میں وزیراعظم عمران خان اور چیئرمین پی سی بی کو مخاطب کرتے ہوئے کہا گیا تھا کہ پاکستانیوں کو تنقید کرنے سے روکا جائے۔

ایک اور ٹویٹ میں کہا گیا تھا کہ بہت سے پاکستانی سمجھتے ہیں کہ میں انڈیا کی ایجنٹ ہوں، سیمی فائنل ہارنے کے بعد ہمیں دھکیاں دی جارہی ہیں۔

ٹویٹ میں یہ بھی کہا گیا کہ اعلیٰ حکام کی جانب سے ان دھمکیوں کو نوٹس نہ لیا گیا تو میں اپنی بیٹی کو لےبھارتی شہر ہریانہ میں اپنے والدین کے پاس منتقل ہوجاؤں گی۔ ٹویٹ میں حسن علی کی بیٹی کو بھی نشانہ بنانے کا الزام لگایا گیا۔

لیکن اب حسن علی کی اہلیہ سامعہ آرزو نے اس ٹوئٹر اکاؤنٹ کا جعلی قرار دیتے ہوئے پاکستان یا دبئی میں ملنے والی دھمکیوں کو خبروں کی تردید کردی ہے۔

سامعہ آرزو نے اپنے انسٹاگرام اکاؤنٹ کے اسٹیٹس پراس ٹوئٹر اکاؤنٹ کی تصویر لگا کر لکھا ہے کہ اس کاونٹ نے بہت سے جعلی ٹویٹس گردش کر رہی ہیں۔ مجھے حسن علی اور بیٹی کو پاکستان سے کوئی دھمکی نہیں ملی بلکہ لوگوں کی جانب سے ہمیں سپورٹ کیا جارہا ہے۔

انہوں نے اس ٹوئٹر اکاؤنٹ کو بلاک کرنے درخواست کرتے ہوئے یہ بھی بتایا ہے کہ ان کا ٹوئٹر پر کوئی اکاؤنٹ ہی نہیں ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں