The news is by your side.

Advertisement

سَر پر لگنے والی شدید چوٹ جان لیوا بھی ثابت ہو سکتی ہے

مختلف بیماریوں اور طبی پیچیدگیوں کے علاوہ زندگی میں چھوٹے بڑے حادثات کے نتیجے میں ہماری ذہنی اور جسمانی کارکردگی متأثر ہوسکتی ہے یا یہ کسی بھی قسم کا حادثہ  عمر بھر کی معذوری کا سبب بھی بن سکتا ہے۔

خاص طور پر سَر پر لگنے والی ضرب یا کوئی شدید چوٹ ہماری زندگی کے لیے خطرہ بن سکتی ہے۔ سڑک پر حادثہ، اچا نک سر کے بَل گرجانا، کھیل کود کے دوران بھی ہمارے سَر پر چوٹ لگ سکتی ہے۔

سَر انسانی جسم کا ایک بہت حساس حصّہ ہے، جو بالوں سے ڈھکا ہوتا ہے جس کے نیچے ایک موٹی کھال اور سخت ہڈی موجود ہوتی ہے۔ جسے ہم کھوپڑی کہتے ہیں جس میں قدرت نے ہمارا دماغ محفوظ رکھا ہے، لیکن سَر پر شدید ضرب لگنے کی صورت میں کھوپڑی کو نقصان پہنچ سکتا ہے اور بعض صورتوں میں دماغ کو زبردست نقصان پہنچتا ہے جس کی وجہ سے زندگی خطرے سے دوچار ہو جاتی ہے۔

اسی لیے طبی ماہرین خاص طور پور سطحِ زمین سے اونچائی پر کام کرنے والوں، کھلاڑیوں اور مزدور پیشہ افراد کو اپنے کاموں کے دوران تمام حفاظتی تدابیر اختیار کرنے کا مشورہ دیتے ہیں۔ سر پر چوٹ لگنے کی صورت میں فوراً ڈاکٹر سے رجوع کرنا چاہیے۔

اکثر معمولی نوعیت کی چوٹ کے بعد بھی ہمیں سَر میں درد محسوس ہوسکتا ہے۔ سَر پر خراش یا زخم کی صورت میں متأثرہ جگہ پر سوجن دکھائی دے گی۔ یاد رکھیے سَر پر معمولی زخم لگنے سے بھی زیادہ مقدار میں خون بہہ سکتا ہے۔

سَر پر لگنے والی چوٹ کو اس وقت انتہائی خطرناک اور باعثِ تشویش سمجھا جاتا ہے، جب اس کی وجہ سے دماغ اور متعلقہ ٹشوز کو نقصان پہنچا ہو۔ ایسی صورت میں مستند اور ماہر معالج سے رجوع کرنا ضروری ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں