The news is by your side.

Advertisement

تفتیش میرے لیے سچ کی تلاش تھی، اراکین اوراداروں کےتعاون سے کامیاب ہوا، سربراہ جے آئی ٹی

اسلام آباد : پاناما کیس کی تحقیقات کرنے والی جے آئی ٹی کے سربراہ واجد ضیاء نے کہا ہے کہ پاناما کیس میں تفتیش میرے لیے سچ کی تلاش تھی جسے تلاش کرنے میں کامیاب ہوئے جس کے لیے بطور سربراہ تفتیش کے تمام پہلووﺅں کی ذمہ داری لیتا ہوں۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق پاناما کیس کی تحقیقات کرنے والی جے آئی ٹی کے سربراہ واجد ضیاء نے کہا ہے کہ جے آئی ٹی کا سربراہ بنانے پر سپریم کوٹ کر مشکور ہوں، جے آئی ٹی کا سربراہ نامزد ہونا میرے لیے باعث فخر ہے، خوشی ہے کہ شپریم کورٹ کے اعتماد پر پورا اترے۔

انہوں نے کہا کہ جے آئی ٹی ممبران کی صلاحیتوں کے بغیر ہدف حاصل کرنا ممکن نہیں تھا جس کے لیے جے آئی ٹی ممبران نے عزم اور غیر جانبداری سے کام مکمل کیا جس پر ایک ایک رکن کا شکریہ اداکرتا ہوں اور بطور سربراہ تفتیش کے تمام پہلووﺅں کی ذمہ داری لیتا ہوں۔

جے آئی ٹی کے سربراہ واجد ضیاء نے کہا کہ جے آئی ٹی کو مختلف محکموں کی معاونت حاصل تھی جس سے حقائق تک پہنچنے میں مدد ملی جس پر اُن تمام محکموں اور افراد کا شکریہ ادا کرتا ہوں جب کہ پوری قوم کا شکر گزار ہوں جنہوں نے اپنے اعتماد اور دعاوؤں سے یہ معرکہ سر کرنے میں تعاون کیا۔


 *جےآئی ٹی کی مفصل رپورٹ پڑھیں  


خیال رہے کہ 5 مئی کو سپریم کورٹ کی جانب سے بنائی جانے والی جے آئی ٹی کی سربراہی ایف آئی اے کے واجد ضیاء کر رہے تھے جب کہ اراکین میں اسٹیٹ بینک سے عامر عزیز، نیب سے عرفان نعیم منگی، ایس ای سی پی سے بلال رسول، آئی ایس آئی سے بریگیڈیئر محمد نعمان سعید، ایم آئی سے بریگیڈیئر کامران خورشید شامل تھے۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں