The news is by your side.

Advertisement

اغوا شدہ بچیوں کو اگلی سماعت پر ہر صورت میں پیش کیا جائے: عدالت کا حکم

اسلام آباد: وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کی ہائیکورٹ میں 2 بچیوں کے اغوا سے متعلق کیس میں عدالت نے آئندہ سماعت تک بچیوں کو ہر صورت میں پیش کرنے کا حکم دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائیکورٹ میں پونے 2 سال سے لاپتہ بچیوں سمیعہ اور ادیبہ کی بازیابی کے لیے دائر درخواست پر جسٹس شوکت عزیز صدیقی نے سماعت کی۔

سماعت کے دوران پنجاب اور اسلام آباد پولیس کے ایس ایس پی عدالت میں پیش ہوئے۔ اسلام آباد پولیس نے عدالت کو رپورٹ پیش کردی۔

دوران سماعت ایس ایس پی کا کہنا تھا کہ بچیوں کی تلاش میں پیش رفت ہوئی ہے 3 افراد کو شامل تفتیش کیا۔ حیدر آباد اور آزاد کشمیر کے لیے پولیس ٹیمیں روانہ کی گئی ہیں۔

مزید پڑھیں: لاپتہ بچیوں کا کیس، کیوں نہ تفتیشی افسر کو جیل بھیج دیں

ایس ایس پی نے بتایا کہ مخبر نے بچیوں کے ریڈ لائٹ ایریا میں نظر آنے کی نشاندہی کی۔ ’بچیوں کو جلد بازیاب کروانے کی کوشش کر رہے ہیں‘۔

جسٹس شوکت عزیز صدیقی نے کہا کہ مجھے کوشش نہیں نتیجہ چاہیئے۔ سابق آئی جی طاہر عالم نے عدالتی احکامات پر تنقید کی۔ ’کیا طاہر عالم اسلام آباد پولیس کے ترجمان ہیں‘۔

انہوں نے کہا کہ اسلام آباد میں آج بھی تھانے آکشن ہوتے ہیں۔ ایک سب انسپکٹر ایسا ہے جو آئی جی کے تبادلے کرواتا ہے۔ ’سابق آئی جی طاہر عالم کو توہین عدالت کا نوٹس دیں گے‘۔

جسٹس شوکت عزیز صدیقی نے کہا کہ گمشدہ بچیاں میری بیٹیاں ہیں۔

انہوں نے حکم دیا کہ آئندہ سماعت تک بچیوں کو ہر صورت پیش کریں۔ ’بچیاں پیش نہ ہوئیں تو آئی جی سمیت سب افسران کو اڈیالہ جیل بھیجوں گا‘۔

عدالت نے کیس کی مزید سماعت 2 مئی تک ملتوی کردی۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں۔ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں