The news is by your side.

Advertisement

اہرام مصر کی تعمیر کیسے ہوئی؟ اہم راز سامنے آگیا

ماہر آثار قدیمہ اور انجینیر جلین داش نے ایک تحقیق میں وضاحت کی کہ خوفو اہرام کے بنانے والوں نے بڑی درستگی اور مہارت کے ساتھ عظیم یادگار کو اہم نکات کے ساتھ ترتیب دیا ہے۔

دنیا کے عجائبات میں شامل سب سے بڑا انسانی عجوبہ اہرام مصر ہے جس کی تاریخ سے لے کر تعمیر تک کئی راز اب تک سربستہ راز ہی ہیں اور محققین صدیوں سے اس کے راز جانے کے بارے میں کوشاں رہے ہیں۔ سب سے زیادہ مبہم سوالات میں سے ایک یہ ہے کہ ان اہراموں کی دیواریں کس طرح مکمل طور پر سیدھی تعمیر ہوئیں۔ بعض مقامات پر ان میں کہیں عدم توازن بھی ہے۔جیزا کے 138.8 میٹر اونچے عظیم اہرام کو خوفو کہا جاتا ہے جو مربع شکل میں تعمیر کیا گیا ہے۔ اس کی دیواریں کافی حد تک سیدھی ہیں۔

دور فرعون کی نشانی پراسرار اہرام مصر جو اپنی منفرد طرز تعمیر اور جادوئی تاریخ کے باعث لوگوں کیلیے ہر دور میں کشش کا باعث رہا ہے حال ہی میں اس کی تعمیر سے متعلق اہم راز دنیا کے سامنے آشکار ہوا ہے۔

ماہر آثار قدیمہ اور انجینیر جلین داش نے جرنل آف اینشیئٹ مصری آرکیٹیکچر میں شائع ہونے والی ایک تحقیق میں وضاحت کی کہ خوفو اہرام کے بنانے والوں نے بڑی درستگی اور مہارت کے ساتھ عظیم یادگار کو اہم نکات کے ساتھ ترتیب دیا۔ یہ رپورٹ "سائنس الرٹ” ویب سائٹ پربھی شائع ہوئی ہے۔

تحقیق میں ماہر آثار قدیمہ نے کہا ہے کہ درحقیقت مصر کے تینوں اہرام (دو جیزا میں اور ایک دہشور میں) نمایاں طور پر ایک دوسرے سے ہم آہنگ ہیں۔ آپ انہیں ڈرون، بلیو پرنٹس اور کمپیوٹرز کے بغیر دور سے نہیں دیکھ سکتے۔ داش نے وضاحت کی کہ تینوں اہرام ایک ہی غلطی دکھائی دیتی ہے۔ جو کارڈنل پوائنٹس سے تھوڑا سا مخالف سمت میں گھومتے ہیں۔

جلین داش نے کہا ہے کہ اگرچہ اس بارے میں بہت سے مفروضے موجود ہیں جیسے کہ قطبی ستارے کا استعمال اہرام کو سیدھا کرنے کے لیے یا سورج کے سائے کا استعال کیا گیا مگر مکمل طور پر واضح نہیں کہ یہ مفروضے کیسے کام کرتے ہیں۔

ماہر آثار قدیمہ جلین داش نے اپنی تحقیق میں انکشاف کیا کہ تقریباً 4,500 سال پہلے مصری موسم خزاں کے ایکوینوکس کو کامل صف بندی حاصل کرنے کے لیے استعمال کر سکتے تھے۔ ایکوینوکس کو اس لمحے کے طور پر دیکھا جاتا ہے جب خط استوا سورج کی ڈسک کے مرکز سے سال میں دو بار گزرتا ہے اور دن اور رات کی لمبائی بڑی حد تک برابر ہوتی ہے۔

اس حوالے سے داش نے 2016 میں موسم خزاں کے ایکوینوکس کے پہلے دن سے شروع ہونے والے اور سایہ ڈالنے کے لیے عقرب کا استعمال کرتے ہوئے اپنا تجربہ کیا جس میں اس نے باقاعدہ وقفوں سے شیڈو پوائنٹ کا سراغ لگایا، دن کے اختتام پر شافٹ کے گرد لپیٹے ہوئے تار کے ایک سخت ٹکڑے کے ساتھ اس نے منحنی خطوط کے دو نقطوں کو عبور کیا اور مشرق سے مغرب کی طرف چلنے والی تقریباً کامل لکیر بنائی۔

اس تجربے کی روشنی میں جلین داش نے کہا کہ غلطی کی ڈگری تھوڑی گھڑی کی سوئی کی سمت میں ہے جو جیزا میں خوفو اور خفری کے اہرام اور دہشور میں سرخ اہرام کی سیدھ میں پائی جانے والی معمولی غلطی سے ملتی جلتی ہے۔

اگرچہ کاغذ سے پتہ چلتا ہے کہ یہ تکنیک اہرام کو سیدھ میں لانے کے لیے استعمال کی جا سکتی تھی لیکن سائنس الرٹ کے مطابق حقیقت میں ہمارے پاس ابھی تک اس کے لیے کوئی مضبوط ثبوت نہیں ہے۔

تاہم یہ مفروضہ ایک دلچسپ نکتہ پیش کرتا ہے۔ یہ کہ موسم خزاں کے ایکوینوکس کے دوران سائے کھینچنے جیسی آسان چیز اتنی نفیس ہوسکتی ہے کہ انسانی تاریخ کے کچھ مشہور قدیم ڈھانچے کے ساتھ ہم آہنگ ہو۔

Comments

یہ بھی پڑھیں