The news is by your side.

Advertisement

پنجاب پولیس کے 2 بڑوں میں ٹھن گئی

لاہور: پنجاب پولیس کے 2 بڑوں میں ٹھن گئی، آئی جی پنجاب شعیب دستگیر اور سی سی پی او عمر شیخ کے درمیان شدید اختلاف سامنے آ گیا۔

ذرایع کا کہنا ہے کہ آئی جی پنجاب نے اپنے فرائض جاری رکھنے سے انکار کر دیا ہے، ان کا اصرار ہے کہ یا تو سی سی پی او رہیں گے یا میں رہوں گا۔

ذرایع نے بتایا کہ آئی جی پنجاب وزیر اعلیٰ عثمان بزدار سے ملاقات کے لیے بھی گئے، انھوں نے 3 روز قبل وزیر اعظم عمران خان سے بھی ملاقات کی تھی۔

معلوم ہوا ہے کہ سی سی پی او عمر شیخ نے پولیس کی پہلی میٹنگ میں آئی جی پر طنز کیا تھا، عمر شیخ میٹنگ میں کہتے رہے کہ آئی جی کو بتا دیں میں سی سی پی او بن گیا ہوں۔

ذرایع کا کہنا ہے کہ سی سی پی او عمر شیخ نے پولیس کو آئی جی آفس کی ہدایت پر کام سے روک رکھا ہے۔

ادھر سی سی پی او لاہور عمر شیخ نے آئی پنجاب سے اختلافات کی تردید کر دی ہے، انھوں نے کہا کہ آئی جی پنجاب میرے سینئر اور کمانڈر ہیں، لوگوں کا اعتراض ہے کہ میں ایس ایس پیز کی جی پی ایس لوکیشنز لیتا ہوں۔

عمر شیخ نے اقرار کیا کہ ہاں وہ جی پی ایس لوکیشنز لیتے ہیں، تاکہ وہ اپنے دفتروں میں 6 گھنٹے بیٹھیں اور لوگوں کو سنیں، جب وہ لوگوں کو سنیں گے تو اپنی انوسٹی گیشنز کو ویریفائی کریں گے۔

انھوں نے کہا اگر میرا آئی جی مجھ سے جی پی ایس لوکیشنز مانگیں تو میں بھی ان کو دینے کو تیار ہوں۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں