site
stats
سندھ

پولیس اب سائنسی بنیادوں پرتفتیش کرے گی، آئی جی سندھ

کراچی : آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ نے کہا ہے کہ سائنسی بنیادوں پرتفتیش کا جامع پروگرام شروع کیا گیا ہے، پنجاب کی طرز پرجدید لیب ستمبر میں کام شروع کردے گی، پولیس کے پاس موجود چھوٹی گاڑیاں گشت کیلئے مؤثرنہیں ہیں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے تفتیشی افسران کو موبائلیں دینے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ آئی جی سندھ نے اپنے خطاب میں کہا کہ وزیراعلیٰ سندھ کو لکھے گئے خط کا جواب نہیں ملا، ان کا جواب آیا تو میڈیا کو بتاؤں گا۔

نئی گاڑیاں کسی بااثر افراد کے بجائے پولیس کی تفتیشی ٹیم کو دی ہیں، کراچی کے ہر پولیس اسٹیشن کو نئی گاڑیاں دیں گے، اے ڈی خواجہ کا کہنا تھا کہ تفتیش واحد شعبہ ہے جس کی اجازت قانون صرف پولیس کو دیتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ پولیس پر حالیہ حملوں میں محسوس کیا گیا ہے کہ چھوٹی گاڑیاں تفتیش اور گشت کیلئے مؤثر نہیں ہیں، ضرورت ہے کہ اب دور جدید کے مطابق شہادتوں کو جدید سائنسی خطوط پر استوار کیا جائے۔

اے ڈی پولیس اب روایتی طریقہ کار چھوڑ کر فرانزک سائنسی طریقوں کا استعمال کرے، پنجاب حکومت کی طرز پر جدید لیب ستمبر تک کام شروع کرے گی، دھماکا خیر مواد لیب کا عنقریب سامان پہنچ جائےگا، لیب میں خول کی میچنگ میں آسانی ہوگی۔


مزید پڑھیں: آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ کی کراچی پولیس کو وارننگ


انہوں نے کہا کہ پولیس سے جو وعدہ کیا وہ پورا کیا، پولیس پر تنقید تفتیش کی وجہ سے ہوتی ہے، دہشت گردی کے کیسز پر پولیس اب پانچ لاکھ روپے تک خرچ کرسکتی ہے ، ٹیکنیکل مدد سے ملزمان تک پہنچ جائیں گے تو کارکردگی بہتر ہوگی، تفتیش کے اخراجات بھی اب مدعی نہیں پولیس خرچ کرے گی۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top