site
stats
پاکستان

توہین عدالت کیس،آئی جی سندھ پر فرد جرم کی کارروائی ٹل گئی

کراچی : سندھ ہائی کورٹ توہین عدالت کیس میں آئی جی سندھ سمیت دیگر افسران پر فرد جرم یکم دسمبر تک ٹل گئی.

تئیس مئی کو سندھ ہائی کورٹ کے باہر نقاب پوش اہلکاروں کا صحافیوں اور گارڈز پر تشدد کے واقعے پر ہائی کورٹ نے ازخود نوٹس لیا اور آئی جی سندھ سمیت چودہ افسران کے خلاف توہین عدالت کی کارروائی شروع کردی۔

آج وفاق کی جانب سے جواب میں کہا گیا کہ آئی جی پولیس کی تقرری کا اختیار سندھ حکومت کا ہے، وفاق صرف نام تجویز کرسکتا ہے۔

چیف سیکریٹری سندھ نے جواب میں کہا کہ عدالتی حکم پر عمل ہوگا لیکن یہ وقت پولیس افسران کیخلاف کارروائی کیلئے مناسب نہیں، پولیس دہشتگردوں کیخلاف آپریشن میں مصروف ہے، بلدیاتی انتخابات کا اہم مرحلہ باقی ہے ، اس موقع پر اعلی افسروں کے خلاف کارروائی سے اہلکاروں کی حوصلہ شکنی ہوگی.


Sindh Police Commando In Mask beating… by ak472522

گزشتہ سماعت میں سندھ ہائی کورٹ نے عدالت کے باہر پولیس تشدد کیس کی سماعت کرتے ہوئے آئی جی سندھ سمیت 14 پولیس افسران کے غیر مشروط معافی نامے مسترد کردئیے اور قرار دیا کہ آئی جی سندھ سمیت تمام پولیس افسران کے خلاف 25 نومبر کو فرد جرم عائد کی جائے گی۔

واضح رہے کہ ذوالفقار مرزا کی رواں سال 23 مئی کو انسداد دہشت گردی کورٹ آمد کے موقع پر پولیس نے عدالتوں کا گھیراؤ کیا، جس کے باعث ذوالفقار مرزا نے انسداد دہشت گردی عدالت جانے کے بجائے سندھ ہائی کورٹ میں داخل ہونے کی کوشش کی، پولیس کے نقاب پوش کمانڈوز نے ذوالفقار مرزا کے سیکورٹی گارڈز اور دیگرساتھیوں اورمیڈیا نمائندوں کوتشدد کا نشانہ بنایا، جس سے متعدد افراد زخمی ہوئے تھے۔

واقعہ کا نوٹس لیتے ہوئے سندھ ہائی کورٹ نے آئی جی سندھ سمیت 14پولیس افسران کو توہین عدالت کے نوٹس جاری کئے تھے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top