آئی جی سندھ کا سانحہ صفورا میں داعش کے ملوث ہونے کا انکشاف -
The news is by your side.

Advertisement

آئی جی سندھ کا سانحہ صفورا میں داعش کے ملوث ہونے کا انکشاف

کراچی : آئی جی سندھ نے سانحہ صفورا میں داعش کے ملوث ہونے کا انکشاف کرتے ہوئے کہا کہ ملزمان ایک سال سے داعش کے ساتھ کام کر رہے تھے، ان کا سرغنہ عبد العزیزشام میں روپوش ہے۔

سینیٹ کی قائمہ کمیٹی برائے داخلہ کا اجلاس سینیٹر رحمان ملک کی زیر صدارت ہوا، آئی جی سندھ غلام حیدر جمالی نے کمیٹی کو بتایا کہ لیاری گینگ وار کے 186 ملزمان مارے جا چکے ہیں، کراچی کے ہائی پروفائل کیسز تقریباً100 فیصد حل کر لئے گئے ہیں۔

انھوں نے بتایا کہ سانحہ صفورا کےملزمان37 وارداتیں کر چکے ہیں، ملزمان سے آرمی، حساس ادارے اور پولیس افسران کی ٹارگٹڈ لسٹ بھی برآمد
ہوئی ہے، ملزمان گذشتہ ایک سال سے داعش کے ساتھ کام کر رہے تھے، ملزمان کے قبضے سے بر آمد 6 لپ ٹاپ میں بہت زیادہ مواد ہے، لشکر جھنگوی اور داعش کا آپس میں گہرا تعلق ہے،سکھر امام بارگاہ حملے میں بھی لشکر جھنگوی ملوث تھی۔

غلام حیدر جمالی نے کمیٹی کو بتایا کہ سانحہ صفورا کے ملزمان کا سرغنہ عبد العزیز شام میں روپوش ہے، کمیٹی کے سربراہ رحمان ملک نے کہا کہ عبدالعزیز کی گرفتاری کیلئے انٹرپول سے بھی رابطہ کیا جائے گا.

یاد رہے کہ صفورا چورنگی کے علاقے میں اسماعیلی برادری کی بس پر حملے میں 47 افراد ہلاک ہوئے تھے.

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں