سپریم کورٹ: تلاشی لینے پر آئی جی سندھ اسٹاف پر برہم -
The news is by your side.

Advertisement

سپریم کورٹ: تلاشی لینے پر آئی جی سندھ اسٹاف پر برہم

کراچی: سپریم کورٹ رجسٹری میں داخلے سے قبل تلاشی لینے پر آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ سیکیورٹی اسٹاف پر بُری طرح برس پڑے۔

تفصیلات کے مطابق کراچی بدامنی کیس کی سماعت کے لیے آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ سپریم کورٹ پہنچے تو مرکزی دروازے پر انہیں چیکنگ کے مرحلے سے گزرنا پڑا اور آئی جی کو گاڑی کی تلاشی دینی پڑی۔

اس دوران آئی جی سندھ نے ڈیوٹی پر مامور اہلکاروں کو اپنا تعارف کروایا تاہم انہوں نے اے ڈی خواجہ کو جواب دیا کہ ہمیں تمام گاڑیوں کی تلاشی لینے کے احکامات دئیے گئے ہیں، چیکنگ کے مرحلے کو عبور کرنے کے بعد آئی جی سندھ اے ڈی خواجہ سرپم کورٹ کے سیکیورٹی آفس پہنچے اور وہاں موجود اسپیشل برانچ سمیت ایس ایس یو کے عملے پر اظہار برہمی کیا۔

پڑھیں :   سپریم کورٹ : سندھ حکومت نے 5 سالہ کارکردگی رپورٹ جمع کرادی

سانحہ کوئٹہ کے بعد تمام عدالتوں میں سیکیورٹی اقدامات کے پیشِ نظر سپریم کورٹ رجسٹری میں داخل ہونے والی تمام گاڑیوں کی چیکنگ ki گئی. اس موقع پر چیف سیکریٹری سندھ صدیق میمن سمیت دیگر افسران کو بھی اسی مرحلے سے گزرنا پڑا۔

مزید پڑھیں : ڈی جی رینجرز کا سندھ ہائیکورٹ کا دورہ، مکمل سیکیورٹی کی یقین دہانی

یاد رہے کوئٹہ بم دھماکے میں وکیلوں کو نشانہ بنائے جانے کے بعد سیکیورٹی اداروں نے تمام عدالتوں میں سخت انتظامات کیے ہیں۔اس ضمن میں پاکستان بار کونسل کے صدر بیرسٹر فروغ نسیم نے بھی وکلا سے سیکیورٹی پر مامور اہلکاروں سے تعاون کی اپیل کی ہے اور اُن سے التماس کی عدالت میں داخلے سے قبل چیکنگ کرواکر عدالت میں داخل ہوں تاکہ وکلا کی سیکیورٹی کو یقینی بنایا جاسکے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں