The news is by your side.

Advertisement

سابق حکومت کے تیار سوشل میڈیا رولز کا معاملہ اسپیکر قومی اسمبلی کو بھیجنے کا حکم

اسلام آباد : اسلام آباد ہائی کورٹ نے سابق حکومت کے تیار سوشل میڈیا رولز کا معاملہ اسپیکر قومی اسمبلی کو بھیجنے کا حکم دیتے ہوئے پیکا ترمیمی آرڈیننس سے متعلق درخواستیں پارلیمنٹ منتقل کردیں۔

تفصیلات کے مطابق اسلام آباد ہائی کورٹ میں سابق حکومت کےتیار کردہ سوشل میڈیا رولز کے خلاف درخواستوں پر سماعت ہوئی ، اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے سماعت کی۔

چیف جسٹس نے ریمارکس میں کہا کہ حکومت تبدیل ہو چکی جب یہ اپوزیشن میں تھے تو ان رولزکے خلاف تھے، کل یہ اپوزیشن میں تھے اب پاور میں ہیں ، بہتر نہیں کہ یہ اسٹیک ہولڈرز سے مشاورت کرکے درست کردیں۔

جسٹس اطہر من اللہ نے مزید کہا کہ عدالت ہمیشہ یہ سمجھتی ہے جو بھی حکومت ہے وہ خود معاملہ ٹھیک کرے ،ضروری ہے کہ آزادی اظہار رائے کا احترام کیاجائے ،آزادی اظہار رائے سےجوہوتا رہا ہے عدالت روزاس کودیکھتی رہی ہے۔

چیف جسٹس اسلام آباد ہائی کورٹ کا ریمارکس میں کہنا تھا کہ رولز میں ہر چیز واضح ہونی چاہیے ، کسی کوآپ اوپن نہیں چھوڑ سکتے جس کا کل غلط استعمال ہو جائے۔

دوران سماعت فرحت اللہ بابر کو عدالت نے روسٹرم پر بلا لیا، چیف جسٹس نے کہا کہ اب آپ کی پارٹی حکومت میں ہے ان رولز کو درست کریں، عدالت یہ کہتی ہے کہ اس حکومت کا ٹیسٹ ہے ، جووہ جو اپوزیشن میں کہتے رہے اب اس کے مطابق درست کریں۔

جس پر فرحت اللہ بابر کا کہنا تھا کہ عدالت یہ معاملہ پارلیمنٹ کوبھیج دیا جائے موجودہ حکومت کابھی ٹیسٹ ہوگا، عدالت نے کہا آزادی رائے ابسلوٹ نہیں ،ہیٹ اسپیچ اور دیگرچیلنجنگ چیزوں کودیکھناضروری ہے، فرحت اللہ بابر نے مزید کہا عدالت معاملہ پارلیمنٹ کو بھیج ،متعلقہ کمیٹی دیکھ لے گی۔3

پارلیمان معاملے کو دیکھے جو رپورٹ آئے گی ہم اس کو دیکھ لیں گے ، چیف جسٹس
چیف جسٹس نے سابق حکومت کے تیارسوشل میڈیا رولز کا معاملہ اسپیکر کو بھیجنے کا حکم دیتے ہوئے کہا سوالات بتا دیں ،آرڈر میں لکھ دیں گے تاکہ ان کو پارلیمان دیکھ لے،جو رپورٹ آئے گی ہم اس کو دیکھ لیں گے۔

عدالت نے پیکا ترمیمی آرڈیننس سےمتعلق درخواستیں بھی پارلیمنٹ کو منتقل کردی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں