site
stats
پاکستان

اسلام آباد ہائی کورٹ کا ’لائیوود شاہد مسعود‘ جاری رکھنے کا حکم

اسلام آباد: ہائی کورٹ نے اے آروائی نیوز کے پروگرام ’لائیو ود ڈاکٹر شاہد مسعود ‘ جاری رکھنے کا حکم دے دیا، پیمرا کی پروگرام بند کرنے کی استدعا مستردکردی گئی۔

تفصیلات کے مطابق آج بروز اسلام آبادہائیکورٹ میں پروگرام ’لائیوود ڈاکٹرشاہدمسعود‘ سے متعلق کیس کی سماعت ہوئی جس کے دوران جسٹس گل حسین اورنگزیب نے پروگرام پروگرام جاری رکھنے کا حکم دیا ہے۔

عدالت نے کہا کہ پابندی اینکر پرسن ڈاکٹرشاہد مسعودپرہےپروگرام پرنہیں، کیس کی سماعت میں وکیل پیمرا نے ڈاکٹر شاہد مسعود کے پروگرام کوبند کرنے کی استدعا کی جسے واضح طور پرمسترد کردیا گیا۔

عدالت نے پیمرا کوتحریری جواب داخل کرنے کا حکم دیا اور کاپی اے آر وائی کےوکیل کو فراہم کرنے کی ہدایت بھی کی۔کیس کی سماعت پیربائیس اگست تک ملتوی کردی گئی، آئندہ سماعت میں اپیل کافیصلہ سنائے جانے کا امکان ہے۔

وکیل فیصل چوہدری نے سماعت کے بعد گفتگو کرتے ہوئے بتایاکہ آئندہ سماعت میں پیمراکاوکیل پیش نہ ہواتودستیاب شواہد پرفیصلہ سنادیا جائے گا۔

شاہد مسعود پر پابندی، چیئرمین پیمرا و سیکریٹری اطلاعات قائمہ کمیٹی طلب*

اس سے قبل چیئرمین قائمہ کمیٹی برائے اطلاعات و نشریات کامل علی آغا نے اے آر وائی کے پروگرام لائیو ود شاہد مسعود اور پروگرام کے اینکر ڈاکٹر شاہد مسعود پر45 دن کے لیے عائد کی گئی پابندی پروضاحت دینے کے لیے چیئرمین پیمرا ابصار عالم اور سیکرٹری اطلاعات کو 22 اگست کو سینیٹ کی قائمہ کمیٹی کے سامنے پیش ہونے کا حکم جاری کر رکھا ہے۔

پیمرا نے اے آروائی کے پروگرام ’’لائیوود شاہد مسعود‘‘پرپینتالیس دن کی پابندی لگائی تھی ، پیمرا کی جانب سے سندھ ہائیکورٹ کے چیف جسٹس پر بہتان لگانے کا الزام عائد کیا گیا تھا۔

دوسری جانب ڈاکٹر شاہد مسعود کا کہنا تھا کہ محض تاثر ملنے پر پینتالیس دن کی پابندی مضحکہ خیز ہے ، پابندی نے نام نہاد جمہوریت کی قلعی کھول دی، انھوں نے سوال کیا کہ حکومت بتائے ایسا کیاجرم کیاکہ کسی ٹی وی پروگرام پرنہیں آسکتا۔

یا د رہے کہ غداری کے الزام میں جیو نیوز پر صرف 15 دن کی پابندی لگائی گئی تھی۔


  ٹویٹرپرشاہد مسعود کی حمایت

#WeSupportDrShahid


 

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top