The news is by your side.

Advertisement

بچے سے زیادتی کرنے والے پولیس اہلکار کیلئے اسلام آباد ہائی کورٹ کا بڑا حکم

اسلام آباد : اسلام آباد ہائی کورٹ نے بچے سے بدفعلی کرنیوالے ملزم پولیس اہلکار شہزاد خلیق کی درخواست ضمانت مسترد کرتے ہوئے ٹرائل تین ماہ میں مکمل کرنے کا حکم دے دیا۔

تفصیلات کے مطابق اسلام ہائی کورٹ میں بچے سے بدفعلی کرنیوالے ملزم پولیس اہلکار کے لئے بڑا حکم جاری کردیا ، جسٹس محسن اختر کیانی نے حکمنامہ جاری کیا۔

عدالت نے پولیس ملازم کی درخواست ضمانت مسترد کرتے ہوئے کہا بچوں سے زیادتی پورے معاشرے کیخلاف سنگین جرم ہے، پولیس اہلکار شہریوں کی حفاظت کے لئے ہیں نہ کہ زیادتی کے لئے۔

حکم نامے میں کہا گیا شہزاد خلیق نے 25 اگست کو زین العابدین نامی بچے پر پستول تانا اور شریک ملزمان کے ساتھ بچے کو بلیک میل بھی کرتا رہا، ماتحت عدالت پولیس اہلکار شہزاد خلیق کا تین ماہ میں ٹرائل مکمل کرے۔

مزید پڑھیں : اسلام آباد ہائی کورٹ کا بچوں سے زیادتی کے بڑھتے واقعات پر بڑا فیصلہ

پولیس اہلکار محمد شہزاد خلیق پر بچے سے بدفعلی کا مقدمہ درج ہے اور شہزاد خلیق نے ضمانت بعد از گرفتاری کی درخواست دائر کی تھی۔

یاد رہے اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہرمن اللہ نے بچوں سے زیادتی کےبڑھتےواقعات پر بڑا فیصلہ دیتے ہوئے کہا تھا زیادتی کیس کی تفتیش اےایس پی سےکم رینک کا افسر نہیں کرے گا۔

فیصلے میں کہا گیا تھا بچوں سےزیادتی کےملزمان کامیڈیکل بورڈسےمعائنہ کرایاجائے، درخواست ضمانت آنےپرملزم کےکرمنل ریکارڈکوبھی حصہ بنایاجائے اور ریکارڈ سے تعین کیا جائے کہ ضمانت کی صورت میں دوبارہ جرم کا امکان تو نہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں